قبلہ اول کے گردریل کا منصوبہ اسرائیل کی خطرناک سازش ہے ،امام مسجد اقصیٰ

قبلہ اول کے گردریل کا منصوبہ اسرائیل کی خطرناک سازش ہے ،امام مسجد اقصیٰ

  

مقبوضہ بیت المقدس(اے این این)فلسطین کے ممتاز عالم دین اور مسجد اقصی کے امام وخطیب الشیخ عکرمہ صبری نے مسجد اقصی کے گرد و پیش میں اسرائیل کے ریل کار منصوبے کو قبلہ اول کے حوالے سے انتہائی خطرناک سازش قرار دیا ہے۔فلسطینی میڈیا سے بات کرتے ہوئے الشیخ عکرمہ صبری نے کہا کہ اسرائیل ایک طرف یہ عوی کرتا ہے کہ وہ مسجد اقصی کے موجودہ اسٹیٹس کے ساتھ چھیڑ چھاڑ نہیں کر رہا ہے اور دوسری طرف قبلہ اول کے گرد و پیش میں ریل کار جیسے سنگین خطرات کا موجب بننے والے منصوبے شروع کر کے قبلہ اول کو خطرے سے دوچار کر رہا ہے۔ایک سوال کے جواب میں الشیخ عکرمہ صبری نے کہا کہ صہیونی بلدیہ کے میئر نیر برکات نے جس ریل کار منصوبے کا اعلان کیا ہے وہ اپنے نتائج کے اعتبار سے نہایت خطرناک ہے۔ اس منصوبے سے براہ راست مسجد اقصی، مسجد کے جنوب میں واقع اموی محلات، محکمہ اوقاف کی اراضی، مقبرہ باب الاسباط اور مراکشی دروازہ متاثر ہوں گے۔ نیز اسرائیل اس سازش کے ذریعے یہودی آباد کاروں کو براہ راست قبلہ اول تک رسائی دینے کی کوشش کر رہا ہے۔الشیخ عکرمہ صبری نے خبردار کیا کہ اسرائیل کی طرف سے مسجد اقصی کے گردو پیش میں ریل کار منصوبے کے سنگین نتائج سامنے آ سکتے ہیں۔ اس منصوبے سے قبلہ اول کو ناقابل تلافی نقصان پہنچنے کا اندیشہ ہے۔

اسرائیل ایک طے شدہ اور منظم سازش کے تحت ریل کار منصوبے کو آگے بڑھا رہا ہے۔الشیخ عکرمہ صبری کا کہنا تھا کہ مسجد اقصی کے قریب سے ریل کار گذارنے کا مقصد بیت المقدس اور قبلہ اول کو یہودیانے کی سازشوں کو آگے بڑھانا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ اسرائیلی حکومت کی طرف سے ریل کار کیلئے جو نقشہ جاری کیا گیا ہے اس کے مطابق ریل کار مسجد اقصی کے دو اطراف سے نہایت قریب سے گذرے گی۔خیال رہے کہ اسرائیلی وزارت داخلہ، سیاحت اور وزارت مذہبی امور نے مشترکہ طور پر بیت المقدس میں یہودیوں کی قبلہ اول تک براہ راست رسائی یقینی بنانے کے لیے ریل کار کے ایک نئے منصوبے کی منظوری دی تھی۔ یہ منصوبہ بیت المقدس کو یہودیانے کے اس نوعیت کے جاری 19 صہیونی منصوبوں میں سے ایک ہے جس کا مقصد یہودی آباد کاروں کو مسجد اقصی تک پہنچنے کے لیے مختصر اور آسان راستہ مہیا کرنا ہے۔

مزید :

عالمی منظر -