لندن ،پاکستانی امیر زادے کا گاڑی ضبط ہونے پر انوکھا جواب

لندن ،پاکستانی امیر زادے کا گاڑی ضبط ہونے پر انوکھا جواب
لندن ،پاکستانی امیر زادے کا گاڑی ضبط ہونے پر انوکھا جواب

  

لندن (نیوز ڈیسک) ایک عام پاکستانی شہری کی گاڑی پولیس ضبط کرلے تو بیچارے کی زندگی اجیرن ہوجاتی ہے اور جب تک گاڑی چھڑوانہ لے زندگی کا پہیہ چلانا ممکن نہیں ہو پاتا، دوسری جانب برطانیہ میں مقیم ایک پاکستانی امیرزادے کے پاس دولت کی ایسی فراوانی ہے کہ اس کی ڈیڑھ کروڑ کی ایک گاڑی پولیس نے پکڑ لی تو وہ یہ کہہ کر چل دیا کہ ’’کوئی بات نہیں۔ میرے پاس اس سے بھی اچھی گاڑی ہے، میں وہ چلا لوں گا۔‘‘یہ نرالا نوجوان 19 سالہ حمزہ شیخ ہے جو سونے کی تہہ سے مزین ایک لاکھ پاؤنڈ (تقریباً ڈیڑھ کروڑ پاکستانی روپے) مالیت کی مسراتی سپر کار کو انشورنس کروائے بغیر سڑکوں پر دوڑارہا تھا کہ پولیس نے اسے روکا اور گاڑی ضبط کرلی۔ حمزہ شیخ نے اس واقعے پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ ’’کنگسٹن پولیس کے اہلکاروں نے میری مسراتی سپر کار انشورنس نہ ہونے کی وجہ سے ضبط کرلی ہے۔ چلو کوئی بات نہیں، میں رولز رائس چلالوں گا۔ ویسے میرے پاس رینج روور بھی ہے اور جلد ہی سونے کی تہہ سے مزئین لیمبرگینی بھی ڈلیور کردی جائے گی۔ میں تو بچپن سے ہی سپر کاروں کی سواری کررہا ہوں۔ میں نے تو ڈرائیونگ بھی پورشے پینامیرا میں سیکھی ہے، تو میرے لئے مسراتی کوئی شے نہیں ہے۔‘‘

مزید :

صفحہ آخر -