ترجیحی اور آزادانہ تجارت کے معاہدوں پر نظرثانی کی جائے:فاؤنڈرزگروپ

ترجیحی اور آزادانہ تجارت کے معاہدوں پر نظرثانی کی جائے:فاؤنڈرزگروپ

لاہور(کامرس رپورٹر)لاہور چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری (فاؤنڈرز گروپ )کے قائم مقام چےئرمین طارق حمید ،سابق صدور بشیر اے بخش، محمد اشرف ،فاروق افتخار، شاہد حسن شیخ اور شیخ محمد آصف نے کہا ہے کہ دوست ممالک کے ساتھ کئے گئے تمام ترجیحی اور آزادانہ تجارت کے معاہدوں پر ازسر نو نظر جائزہ لے کر ضروری ترمیم کی جائے کیونکہ ان کا جھکاؤ ایک طرف ہے جس سے ہماری معیشت کو نقصان پہنچ رہا ہے۔ دوست ممالک سے تجارتی معاہدوں کا بنیادی مقصد ملکی معیشت کو نقصان پہنچائے بغیر تجارت میں اضافہ تھا جس پر عمل نہیں ہو سکا۔ انہوں نے کہا کہ تجارتی معاہدوں کے بعد ملکی تجارت میں اضافہ تو کیا ہونا تھا تین سال کے دوران درآمدات میں تین سو فیصد اضافہ ہوا ہے جو کہ زرمبادلہ کے ذخائر کیلئے ناقابل برداشت ہے۔ درآمدات میں اضافہ کے ساتھ برآمدات میں مسلسل کمی ہو رہی ہے جبکہ تجارتی خسارہ بتیس ارب ڈالر کی ریکارڈ سطح تک جا پہنچا ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ صورتحال بہت تشویشناک ہے اور اس سے عہدہ براہ ہونے کیلئے فوری اقدامات کی ضرورت ہے۔تجارتی معاہدوں سے بھاری مقدار میں غیر ملکی اشیاء درآمد ہو رہی ہیں جن میں وہ اشیاء بھی شامل ہیں جو مقامی طور پر دستیاب ہیں۔ اس سے مقامی صنعت کو زراعت کو نقصان پہنچ رہا ہے۔

، بہت سے کارخانے بند ہو گئے ہیں، لوگ بے روزگار ہو رہے ہیں جبکہ پاکستانی سرمایہ کاروں کی حوصلہ شکنی بھی ہو رہی ہے۔

مزید : کامرس