12رکنی ٹیم 3 لا پتہ کوہ پیماؤں کی تلاش کیلئے آج آزاد کشمیر روانہ ہوگی

12رکنی ٹیم 3 لا پتہ کوہ پیماؤں کی تلاش کیلئے آج آزاد کشمیر روانہ ہوگی

  

اسلام آباد (اے پی پی) الپائن کلب آف پاکستان کے سیکرٹری جنرل کرار حیدری نے کوہ پیماؤں کیلئے کوئی بھی چوٹی کو عبور کرنا آسان کام نہیں بلکہ خطرناک اور بڑا مشکل کام ہے، گذشتہ روز اے پی پی سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ کئی بار موسم کی خرابی اور برفباری کے باعث کو پیماؤں کو کئی کئی دنوں روکنا پڑتا ہے اور کوہ پیماؤں کیلئے کوئی بھی چوٹی کو عبور کرنا آسان نہیں بلکہ خطرناک اور مشکل کام ہے لیکن پھر بھی کوہ پیما اپنی زندگی کی بازی لگانے کیلئے تیار ہو جاتے ہیں اور کئی مقامات پر کوہ پیما چوٹیوں کو عبور کرنے کے دوران زندگی کی بازی بھی ہار جاتے ہیں۔ حکومت کو ان کے بیوی، بچوں کے اخراجات برداشت کرنے کے لئے اقدامات کرنے چاہیں۔ انہوں نے کہا کہ تین سال قبل لاپتہ ہونے والے تین کوہ پیماؤں کی تلاش کیلئے 12 رکنی ٹیم (آج) بدھ کو 15 دن کیلئے سروالی چوٹی آزاد کشمیر روانہ ہو رہی ہے، یہ 12 رکنی ٹیم تجربہ کار ارکان پر مشتمل ہے جس کی قیادت الپائن کلب آف پاکستان کے نائب صدر رحمت اللہ کر رہے ہیں اس ٹیم میں بلتستان سے نامور کوہ پیماہ شامل ہیں جن میں معروف کوہ پیما صادق سد پارہ، علی رضا، علی موسی، اشرف سدپارہ شامل ھیں جو پاکستان کی آٹھ ہزار میٹر سے بلند بشمول کے ٹو سر کر چکے ہیں۔ تینوں کوہ پیما لاپتہ ہوگئے جن کی تلاش ابھی تک جاری ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس سے قبل بھی تین بار مختلف ٹیموں نے سینئر کوہ پیما کرنل (ر ) عبدالجبار بھٹی کی قیادت میں زمینی اور فضائی سطح سے ان کوہ پیماؤں کو تلاش کیا لیکن وہ نہ مل سکے،کرار حیدری کے مطابق اس چوٹی کی اونچائی 6326 میٹر ہے ۔

مزید :

کھیل اور کھلاڑی -