مہمد،یکہ غنڈ میں ا ندھیر نگری،اغواکار کیساتھ مغوی بھی پابند سلاسل

مہمد،یکہ غنڈ میں ا ندھیر نگری،اغواکار کیساتھ مغوی بھی پابند سلاسل

  

شبقدر (نمائندہ خصوصی)ضلع مہمند کے سب ڈویژن یکہ غنڈ انتظامیہ نے اغواء کار کے ساتھ مغوی کو بھی گذشتہ تین دنوں سے پابند سلاسل کر دیا ہے ۔ اغواکار کے دیگر ساتھی دندناتے ساتھی کو چھوڑانے تحصیل میں پھیر رہے ہیں ۔ کوئی پرسان حال نہیں ۔ پختون خواء میں ضم ہونے کے باوجود بھی ضلع مہمندمیںآج بھی ایف سی آر کاکالا قانون نافذ ہے ۔ کوئی میرے بیٹے کا یکہ غنڈ انتطامیہ سے بازیاب کرائیں ۔ ان خیالات کا اظہار شبقدر منسوکا کے رہائشی گل آمین نے شبقدر پریس کلب میں اپنے ایک پریس کانفرنس کے دوران کی ۔ انہوں نے کہا کہ 24اگست کو ان کا 20 سالہ بیٹا حضرت شیر ضلع مہمند کے تحصیل امبار میں اپنے چچا سے چار لاکھ روپے لانے گیا ہوا تھا جہاں سے واپسی پر ملزمان نے ان کے بیٹے کو اغواء کر لیا لیکن حاصہ دار فورس کو بروقت اطلاع ملنے پر میرے بیٹے کو ملزمان سے راستے میں ہی بازیاب کرایا گیا جبکہ اس دوران ایک ملزم بھی حاصہ دار فورس گرفتار کرکے یکہ غنڈ تحصیل لائے ۔ لیکن اس دوران مزید چار ملزمان نوشیر ولد طورگل ، گران شیر ، رائیس ولدسیدا میر اور ناظر ولد سرتاج فرار ہونے میں کامیاب ہو گئے تھے ۔ انہوں نے کہا کہ یکہ غنڈ انتطامیہ نے گذشتہ چار دنوں سے اغواکار سمیت ان کے مغوی بیٹے کو بھی جیل میں بند کر دیا ہے جبکہ دیگر ملزمان اپنے ساتھی کو چھوڑانے تحصیل آتے دیکھے جاتے ہیں لیکن انتظامیہ ملزمان کو گرفتار کرنے کے بجائے دفاتر میں بیٹھا دیتے ہیں ۔ انہوں نے وزیر اعلی خیبر پختون خواء اور چیف سیکرٹری خیبر پختون خواء سے واقعہ کا فوری نوٹس لیتے ہوئے ان کے بیٹے کو رہا کرنے اور ان کے بیٹے کے اغواء میں ملوث ملزمان کو گرفتار کرنے کی اپیل کی ۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -