جنوبی پنجاب صوبے کا قیام حکومت کو کئی چیلنجز کا سامنا ، اہم اقدامات کی ضرورت

جنوبی پنجاب صوبے کا قیام حکومت کو کئی چیلنجز کا سامنا ، اہم اقدامات کی ضرورت

  

ملتان‘ صادق آباد (نمائندہ پاکستان‘ مانیٹرنگ ڈیسک) جنوبی پنجاب صوبہ کا قیام وقت کی اہم ضرورت مگر تینوں ایوانوں میں دو تہائی اکثریت کا ہونا لازم و ملزوم ہے‘ موجودہ حکومت(بقیہ نمبر31صفحہ12پر )

کو صوبائی، قومی اور سینیٹ میں دو تہائی اکثریت کی ضرورت ہو گی جو کہ موجودہ پی ٹی آئی کی حکومت کے پاس موجود نہیں ہے ۔ حکومت کو صوبہ کے قیام کیلئے پیپلزپارٹی ، مسلم لیگ ن اور دیگر سیاسی جماعتوں کو ساتھ ملا کرہی جنوبی پنجاب صوبہ کے قیام کیلئے اقدامات کیے جاسکتے ہیں ۔ جنوبی پنجاب کے عوام پانی، بجلی، گیس، تعلیم ، صحت ، وکیشنل انسٹیٹیوٹ ‘ یونیورسٹیوں سمیت دیگر اہم بنیادی سہولیات سے محروم ہیں اکثریت مکمل ہونے کے بعد ہی جنوبی پنجاب صوبہ کا قیام عمل میں آسکتا ہے ، دوسری جانب بہاول پور صوبہ بحالی تحریک کے رہنما محمد علی درانی سمیت دیگر رہنماؤں کو بھی جنوبی پنجاب صوبے کے قیام پر آمادہ کرنے کی ضرورت پیش آئے گی ، آئین کے مطابق صوبہ کا قیام کسی بھی سیاسی جماعت کیلئے تینوں ایوانوں میں دو تہائی اکثریت حاصل کرنا ضروری ہے۔

صوبے کا قیام

مزید :

ملتان صفحہ آخر -