اے پی سی بلانا مولانا فضل الرحمن کاحق، نوازشریف کو اخلاقا واپس آجانا چاہیے: شاہ محمود قریشی 

اے پی سی بلانا مولانا فضل الرحمن کاحق، نوازشریف کو اخلاقا واپس آجانا چاہیے: ...

  

   ملتان (نیوز رپورٹر) وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ اس وقت پوری دنیا میں شہدائے کربلا سے عقیدت و احترام کا اظہار کیا جا رہا ہے۔اس سال بھی عزاداری نہایت احترام سے کی جارہی ہے۔ دین کی حفاظت میں امام عالی مقام اور ان کے خانوداہ کا تاریخی کردار بھلایا نہیں جاسکتا۔ملتان میں بھی شیعہ سنی مل جل کر امام عالیٰ مقام کو خراج عقید تہ پیش کرتے ہیں۔ملک بھر کی طرح ملتان کا امن بھی(بقیہ نمبر20صفحہ6پر)

 مثالی ہے۔محرم الحرام کے تقدس کا تقاضا ہے کہ ہم اپنی صفوں میں مکمل اتحاد اور ہم آہنگی قائم رکھیں۔میں عوام سے درخواست کرونگا ماضی کی طرح انتظامیہ اور پولیس سے تعاون کریں تاکہ یوم عاشور خیر خیریت سے گزر سکے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے گزشتہ روز مرکز ی امام بارگاہ حسین آباد دولت گیٹ میں اتحاد و امت و یکجہتی کے حوالے سے دورہ کے موقع پر میڈیا سے گفتگوکرتے ہوئے کیا۔ صوبائی امن کمیٹی کے ممبر ملک شفقت حسنین بھٹہ‘ ملک شجر عباس کھوکھر‘ سماجی رہنما سبطین رضا لودھی‘ سید طالب حسین پرواز‘ عمران گردیزی‘ ڈاکٹر لیاقت ہاشمی ودیگر افراد اس موقع پر موجود تھے۔انہوں نے کہایہ سال ماضی کے سالوں سے مختلف ہے۔کورونا کی وباء کے دوران عید الضحیٰ بھی گزری اور محرم بھی گزر رہا ہے اور یہ پاکستان اور یہاں کے عوا م پر اللہ کا کرم ہے۔کورونا وائر س کے کیسز میں کمی آئی ہے۔ملک بھر میں حالات تقریباً معمول پر آچکے ہیں۔اللہ تعالیٰ کے خصوصی کرم سے پاکستان کے حالات بہتر ہوئے۔ پاکستان میں کوروناکی وباء دم توڑ رہی ہے۔ اس وقت ہندوستان میں جس تیزی سے کرونا پھیل رہا ہے۔خدشہ ہے بھارت دنیا میں سب سے زیادہ کورونا متاثرہ علاقہ بن جائے گا۔ کراچی سمیت ملک بھر میں حالیہ بارشوں پر ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا جو میں نے کراچی کے ویڈیو کلپ دیکھے ہیں اس سے بے حد پریشانی لاحق ہے۔کراچی والے اس وقت قرب کی صورتحال سے دو چار ہیں۔گاڑیاں اور کنٹینر پانی میں تیر رہے ہیں۔سندھ اور وفاقی حکومت کو چاہیے کہ ملکر شہریوں کی تکلیف کم کی جائے۔ اس وقت بارشوں کی نویت غیر معمولی ہے۔کراچی کے لوگوں کا کاروبار, رہن سہن بری طرح متاثر ہے۔کراچی کی کچی آبادیاں سمیت پوش علاقہ بھی بری طرح متاثر ہوا ہے۔ہمیں کراچی کی عوام سے ہمدردی ہے۔ عوام کو ریلیف دینے کیلئے چاہے سندھ کی حکومت یا وفاق کی ہمیں مل کر کراچی کے لیئے اپنا کردار ادا کرنا ہے۔وزیر اعظم نے این ڈی ایم اے سمیت تمام محکموں کو فوری اقدامات کرنے کی ہدایت کی ہے۔کراچی شہر کی بڑھتی آبادی کے پیش نظر منصوبہ بندی نہ کی گئی۔ابھی بھی وقت ہے کراچی میں بارشوں اور سیلاب یا کسی بھی ناگہانی صورتحال سے نمٹنے کیلئے حکمت عملی تیار کرنی چاہئے۔ بھارت کے پانی چھوڑنے کے حوالے اور سیلابی صورتحال پر ایک سوال کے جواب میں وزیر خارجہ نے کہا بھارت نے کبھی ہمیں پریشان کرنے کا موقع ہاتھ سے جانے نہیں دیا۔جہاں تک ہو سکتا ہے پاکستان کو نقصان پہنچانے کی کوششیں کرتا ہے۔ جب ہمیں پانی کی ضرورت ہوتی ہے تب بھارت پانی روک لیتا ہے۔اور جب یہاں پانی زیادہ ہوتا ہے وہ منصوبہ بندی کے لیے پانی چھوڑ دیتے ہیں۔نواز شریف کی وطن واپسی کے حوالے سے ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا میڈیکل ایکسپرٹس کی رائے پر وزیراعظم کی مشاورت کے بعد انسانی ہمدردی کی بنیاد پر نواز شریف کو باہر علاج کیلئے جانے کی اجازت دی۔ لیکن اجازت کی شرائط کے مطابق وہ اپنی میڈیکل رپورٹ سے حکومت کو آگاہ نہیں کررہے۔ اورشہباز شریف اپنے دیئے گئے بیان حلفی کے مطابق عمل درآمد نہیں کررہے۔اور وہاں بیٹھ کر سیاست کررہے ہیں۔ نواز شریف کو چاہئے اگران کی طبیعت ٹھیک ہے تو انہیں اخلاقاً واپس آناچاہئے اور واپس آکر مقدمات کا سامنا کرنا چاہئے۔سی پیک چیئرمین جنرل (ر) عاصم سلیم باجوہ کے حوالے سے ایک سوال کے جواب میں وزیر خارجہ نے کہاآ ج کل روایت چل گئی ہے خبر پہلے چل جاتی ہے تصدیق بعد میں کی جاتی ہے۔خبر کو تصدیق کے بعد بریک کرناچاہئے۔وزیر اعظم کے معاون خصوصی عاصم سلیم باجوہ کی خبروں کے حقائق بھی سامنے آ جائیں گے۔ اے پی سی کے حوالے سے ایک سوال کے جواب میں وزیر خارجہ نے کہا اے پی سی سے کوئی ڈر نہیں یہ پہلی یا آخری اے پی سی نہیں۔ پہلے بھی ایسی اے پی سی ہوتی رہی ہیں۔ اے پی سی بلانا مولانا فضل الرحمن کاحق ہے۔ بعد ازاں وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی نے امام بارگاہ حسین آباد کا دورہ کیا۔ امام بارگاہ کی انتظامیہ نے محرم الحرام کے حوالے سے انتظامیہ کی جانب سے کئے گئے اقدامات بارے آگاہ کیا۔ اس موقع پر وزیر خارجہ نے ملک اور قوم ترقی اور امن و امان کے لئے خصوصی دعا کروائی۔

شاہ محمود

مزید :

ملتان صفحہ آخر -