وقت ظالم ہے

   وقت ظالم ہے
    وقت ظالم ہے

  

                                                                                       وقت ظالم ہے

وقت بہت ظالم ہے

اکثر یہ حاوی ہو جاتا ہے

انسان کی ذاتِ پہ

جب ایسا ہوتا ہے

تو یہ انسان کو

ٹھوکر  پہ رکھتا ہے

معصومیت کا لبادہ چھین لیتا ہے

  تنہا کر دیتا ہے

یہ حاکم کو فقیر

اور فقیر کو حاکم   بنا دیتا ہے

 جب وقت کی کایا پلٹتی ہے

تو موسم بھسم ہو جاتے ہیں

امید کہ جگنو بجھنے لگتے ہیں

زندگی تاریک ہونے لگتی ہے

پھر لبوں سے آہ نکلتی ہے

نمی کو پی لیا جاتا ہے

خاموشی سے جی لیا جاتا ہے

پھر ہر طرف خاموشی رہتی ہے

آسیب زدہ خاموش

شاعرہ: حنا شہزادی

Waqt Bahut Zaalim Hay

Aksar Yeh Haavi Ho Jaata Hay

Insaan Ki Zaat Pe

Jab AIsa Hota Hay

To Yeh Insaan Ko

Thokar Pe Rakhta Hay

Masoomiat Ka Libaada Chheen Leta Hay

Tanhaa Kar Deta Hay

Yeh Haakim Ko Faqeer

AOr Faqeer Bana Deta hay

jab Waqt Ki Kaaya Palatti Hay

To Maossam Bhassam Ho Jaatay Hen

Umeed k Jugnu Bujhanay Lagtay Hen

Zindgai Tareek Honay Lagti Hay

Phir labon Say Aah Nikalti Hay

NAmi Ko Pee Lia Jaata Hay

Khamoshi Say Ji Lia Jaata hay

Phir har Taraf Khamoshi Rehti Hay

Aasaib Zada Khaamoshi

Poetess: Hina Shehzadi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -