قاتلوں سے نہ ہارا لہو

قاتلوں سے نہ ہارا لہو
قاتلوں سے نہ ہارا لہو

  

بہتے بہتے پکارا لہو 

قاتلوں سے نہ ہارا لہو

حزیت زیرِ تعمیر تھی

کیوں نہ ہوتا صف آرا لہو

زندگی کا مسافر شہید

عشق کا استعارہ لہو

آگ، خیمہ ، طنابیں، ہوائیں

ریت، دریا، کنارہ، لہو

صبر کے پاسباں قہقہے

ظلم ، آنکھیں، نظارا لہو

روشنی کا سفر ہے جہاد

کربلا چاند، تارہ لہو

زورِ مظلوم کی بھی کم نہیں

توڑ دے ہر اجارہ لہو

اپنی تاریخ نصرتِ مآب

فتح کا گوشوارہ لہو

وقف ہے دین کے واسطے

اِن رگوں کا بھی سار الہو

سرخرو ہوں مظفر اصول 

خاک پر بھی گوارہ لہو

شاعر: مظفر وارثی

             Behtay Behtay Pukaara Lahuu

                Qaatlon Say Na Haara  Qarbla

                                 Hazyat Zer  e  Tameer Thi

                 Kiun Na Hota Saf Ara Lahoo

            Zindagi Ka Musaafir Shaheed

                               Eshq Ka ai Sitaara Karbla

Aag, Khaima Tanaaben, Hawaaen

                     Rait, Darya, Kinaara Lahoo

                    Sabr K Paasbaan Qehqahay

     Zulm Aankhen, Nazaara Lahoo

               Roshnai Ka Safar Hay Jihaad

          Karblaa  Chaand, Taara Lahoo

   Zor  e  Mazloom Bhi Kam Nahen

                      Torr Day Har Ajaara Lahoo

              Apni Tareekh Nusrat  e  Maab

                       Fath Ka Goshwaara Lahoo

                      Waqf  Hay Deen K Waastay

            In Ragon Ka Bhi Saara Lahoo

 Surkhru Hon MUZAFAR Asool

Khaak Par Bhi Gawaara LLahoo

                                                       Poet: Muzaf warsi

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -