گونجتی ہے ساری دنیا میں اذانِ کربلا

گونجتی ہے ساری دنیا میں اذانِ کربلا
گونجتی ہے ساری دنیا میں اذانِ کربلا

  

کٹنے والی گردنیں والی گردنیں، نام و نشانِ کربلا

پیش لفظِ زندگی، پس ماندگانِ کربلا

بیچنے آئے ہیں خود کو مصطفےٰ کے لاڈلے

کتنے بازاروں پہ بھاری ہے دکانِ کربلا

خون سے بھی لکھے جاتے ہیں خدا کے فیصلے

خامہِ قدرت کے منہ میں ہے زبانِ کربلا

کٹ گیا انسانیت کے باب سے نامِ یزید

ایک تاریخی گواہی ہے بیانِ کربلا

گرتی ہوئی لاشوں پر ہی بنیادِ حرم رکھی گئی

گونجتی ہے ساری دنیا میں اذانِ کربلا

میرے اندر بھی رہا کرتی ہے جنگِ خیر و شر

مل ہی جاتی ہے مرے سچ کو امانِ کربلا

کاش اُس مٹی تلک پہنچا دیا جائے مجھے

میں آنکھوں سے چُنوں گا زعفرانِ کربلا

طالبِ علم شہادت ہوںمظفر وارثی

زندگی کو بھی ہے درپیش امتحانِ کربلا

شاعر: مظفر وارثی

                 Katnay Wali Gardnain, Naam  o  Nishaan  e Karbla

                              Paish Lafz  e  Zindagi, Pasmaandgaan  e  Karbla

       Baichnay Aaey Hen Khud Ko MUSTAFA K Laadlay

                  Kitnay Bazaaron Pe Bhaari Hay Dukaan  e  Karbla 

       Khoon Say Bhi Likhay Jaatay Hen Khuda K Faisalay

    Khaama  e  Qudrat K Munh MenHay Zubaan  e  Karbla

                             Katt Gia Insaanyat K Baab Say Naam  e  Yazeed

                                       Aik Tareekhi Gawaahi Hay Bayaan  e  karbla

       Girti Bunyaadon Par Hi Bunyaad  e  haram Rakhi Gai

                             Goonjti Hay Saari Dunya Men Azaan  e  Karbla

  Meray AndarBhi Raha Karti Hay Jang  e  Khair  o  Shar

                 Mill Hi Jaati Hay Miray Sach Ko Amaan  e  Karbla

             Kaash uss Mitti Talak Pahuncha Dia Jaaey Mujhay

       Main Bhi Aankhon Say Chunu  Ga Zafraan  e  Karbla

               Taalib  e  Elm Shahaadat Hun MUZAFAR WARSI

                 Zindagi Ko Bhi Hay Darpaish Imtehaan  e  Karbla

                                                                                                                                                   Muzafar Warsi

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -