اب حسین سارے زمانے کو چاہیے

اب حسین سارے زمانے کو چاہیے
اب حسین سارے زمانے کو چاہیے

  

جرأت فصیلِ جبر گرانے کو چاہیے

اب حسین سارے زمانے کو چاہیے

سجدہ اگر امام بھی ہو مقتدی بھی ہو

سجدے کے ساتھ سر بھی کٹانے کو چاہیے

اے راستے کی خاک یہ احسان تُو ہی کر

زینت کے سر پہ چادر اُڑھانے کوچاہیے

کاٹی گئی تھی خون سے گردن یزید کی

تلوار پھر وہ دھار لگانے کو چاہیے

نیزوں پہ سر، جلے ہوئے خیمے ، اداس شام

اب اور کیا نبی کے گھرانے کو چاہیے

تھوڑے سے خوں سے نام مٹانا ہے ظلم کا

تھوڑا سا خوں چراغ جلانے کو چاہیے

جس میں مصوروں کا لہو ہو بھرا ہوا

تصویر ایسی آئینہ خانے کو چاہیے

دَھن کی ٹوٹتی رہیں گی تجوریاں

اِک چور غیرتوں کے خزانے کو چاہیے

مظفر وارثی

                                     Jurrat Faseel  e  Jabr Giraanay Ko Chaahiay

                                   Ab Hussain Saaray Zamaanay Ko Chaahiay

                                   Sajda Agar Imaam Bhi Ho , Muqtadi Bhi Ho

                     Sajday K Saath Sar Bhi Kattaanay Ko Chaahiay

                                     Ay Raastay Ki Khaak Yeh Ehsaan To Hi Kar

   ZAINAB K Sar Pe Chaadar Urrhaanay Ko Chaahiay

                                Kaatti gai Thi Khoon Say Gardan Yazeezd Ki

                           Talwaar Phir Wo Dhaar lagaanay Ko Chaahiay

         Naizon Pe Sar, Jalay Huay Khaimay, Udaas Shaam

                                 Ab Aor Kia NABI K Gharaanay Ko Chaahiay

Thorray Say Khoon Say Naam Mitaana hay Zulm Nay

            Thorra Sa Khoon Charaagh Jalaanay Ko Chaahiay

                              Jiss Men Musawwron Ka Lahu Ho Bahra Hua

                                       Tasweer Aisay Aain Khaanay Ko Chaahiay 

                                                                  Dhan Ki Tootti Rahen Gi Tajooriaan

                                      Ik Chor ghairton k KhazaanayKo Chaahiay

                                                                                                                                               Muzafar Warsi

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -