مظلومِ دو جہاں پہ کہوں مرثیہ ، مجال

مظلومِ دو جہاں پہ کہوں مرثیہ ، مجال
مظلومِ دو جہاں پہ کہوں مرثیہ ، مجال

  

مظلومِ دو جہاں پہ کہوں مرثیہ ، مجال

کھینچوں لبِ فرات پہ میں حاشیہ، مجال

کیسے دکھاؤں کوئی نیا زاویہ، مجال

میرے قلم کی نوک سے وہ المیہ ، مجال

مولیٰ علیؑ مدد کہ تمہارے کرم پہ میں

چلنے لگا انیسؔ کے نقشِ قدم پہ میں

ہے زخم زخم لالہ و گل کا بدن تمام

پھولوں سے تتلیوں کا معطل ہوا کلام

سہما ہوا کھڑ ا ہے ہواؤں کا بھی خرام

یکساں گزر رہی زمانے میں غم کی شام

ہونے کو ہے زمیں پہ قیامت کا واقعہ

صبحِ ابد تلک کی ندامت کا واقعہ

گھوڑوں پہ ہے سوار قرینے سے وہ حسینؑ

نکلا ہے نکہتوں کے خزینے سے وہ حسینؑ

خوشبو خجل ہو جس کے پسینے سے وہ حسینؑ

کوفہ کو چل پڑا ہے مدینے سے وہ حسینؑ

بڑھنے لگی ہے جانبِ کربل ستم کی شام

ذوالحج سے جا ملی ہے محرم کے غم کی شام

پہنچا وہ شہسوارِ خدا کربلا میں ہے

وہ خیمہ زن بہارِ وفا کربلا میں ہے

آلِ نبی کی حمد و ثنا کربلا میں ہے

یعنی نسیمِ بادِ صبا کربلا میں ہے

ہائے وہ ریگزار وہ گرمی وہ سرخ دھوپ

سنولا دیاہے جس نے قیامت کا رنگ و روپ

اترا لبِ فرات ہے سورج زمیں پر

یعنی بنا ہے دھوپ کا مخرج زمین پر 

تانبہ بنی ہے آگ کی سج دھج زمین پر

ملتی نہیں ہے چھاؤں کو دھیرج زمین پر

 اُس ریگزار میں ہے محمؐد کا لاڈلہ

یہ کس دیا ر میں ہے محمؐد کا لاڈلہ

منصور آفاق

Mazloom  e  Dojahaan Pe Kahun Marsiaa Majaal

Khainchun Lab  e  Furaat Pe main Haashia Majaal

Kaisay Dikhaaun Koi Naya Zaavia Majaal

Meray Qalam Ki Noke Say Wo Almiaa Majaal

Mola ALI Madad keh Tumhaaray Karam Pe Main

Chalnay Laga Anees K Naqsh  e  Qadam Pe Main

Hay Zakham Zakhm Laala  o  Gull Ka Badan Tamaam

Phulon Say Titliun Ka Muattal Hua Kalaam

Sehma Hua Kharra Hay hawaaon Ka Bhi Kharaam

Yaksaan guzarrahi Hay Zamaanay Men Gham Ki Shaam

Honay Ko Hay Zameen Pe Qayaamat Ka waaqia 

Subh  e  Abad Talak Ki Nadaamat Ka Waaqia 

Ghorray Pe Hay Sawaar Qareenay Say Wo HUSSAIN

Nikla Hay Nikhaton K Kahzeenay Say Wo HUSSAIN

Khushbu Khajil Ho Jiss K Paseenay Say Wo HUSSAIN

Koofa Ko Chall Parra Hay Madeenay Say Wo HUSSAIN

Barrnay Lagi Hay jaanib  e  Karbal Wo Gham Ki Shaam

Zulhajj Say Ja Milli hay Muharram  K Gham Ki Shaam

Pahuncha Wo Shehsawaar  e  Khuda karbalaa Men Hay

Wo Khaima Zan Bahaar  e  Wafa Karbalaa Men Hay

Aal  e NABI Ki Hamd  o Sanaa Karbalaa Men Hay

Yaani Naseem  e  Baad  e  Saba  Karbalaa Men Hay

Haaey Wo Regzaar, Wo Garmi , Wo Surkh Dhoop

Sanwlaa Dia Hay Jiss Nay Qayaamat Ka Rang  o  Roop

Utra Lab  e  Furaat Hay Suraj Zameen Par

Yaani Bana Hay Dhoop Ka Makhraj Zameen Par

Taanba Bani Hay Aag Ki Saj Dhajj Zameen Par

Milti Nahen Hay Chhaaon Ko Dherajj Zameen Par

Uss Raigzaar Men hay MUHAMMAD ka Laadla

Yeh Kiss Diayaar Men Hay MUHAMMAD Ka Laadla

                                                                                                                                              Mansoor Afaq

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -