افواجِ اہلِ بیت کے سالار تھے حسینؑ

افواجِ اہلِ بیت کے سالار تھے حسینؑ
افواجِ اہلِ بیت کے سالار تھے حسینؑ

  

جو چاہتے حسینؑ تو پانی لبِ فرات

کرتا کچھ ایسی موج رسانی فرات

سیلاب بھول جاتے روانی لبِ فرات

طوفانِ نوح کرتا کہانی لبِ فرات

پانی دکھائی دیتا افق تک نگاہ کو

لہریں اچھال دیتیں یزیدی سپاہ کو

کہتے رہے فرشتے ہمیں حکم کیجیے

جنت سے لے آئے ہیں یہ جام، پیجیے

جنات ہاتھ باندھ کے حاضر ہیں لیجیے

افلاک نے کہا کہ اشارہ تو کیجیے

لیکن مرے حسینؑ کا مقصد کچھ اور تھا

اُس دم خیالِ سبطِ محمد کچھ اور تھا

آخر خدا کے دین کے امام تھے حسینؑ

افواجِ اہلِ بیت کے سالار تھے حسینؑ

نسلِ رسل کے صاحبِ دستار تھے حسینؑ

قربانیِ عظیم کو تیار تھے امام

پھر سجدۂ شعور کی ساعت ہوئی طلوع

نیزے پہ ایک قیامت ہوئی طلوع

منصور آفاق

Jo Chaahtay HUSSAIN To Paani Lab  e  Fyraat

Karta Kuch Aisi Maoj Rasaani LAb  e  Furaat

Sailaab Bhool Jaatay Rawaani Lab  e  Furaat

Tufaan  e  Nooh Kehta Kahaani Lab  e  Furaat

Paani Dikhaaee Deta Ufaq Tak NIgaah Ko

Lehrain Uchaal Daiten Yazeedi Foj Ko

Kehtay rahay Farishtay Hamen Hukm Kijiay

Jannat Say Lay K Aaey Hen Yeh Jaam, Pijiay

Jinnaat Haath Baandh K Haazir Hern Lijiay

Aflaak Nay Kaha Keh Ishaara To Kijiay

Lekin Miray HUSSAIN Ka maqdad Kuchh Aor Tha

Uss Dam Khayaal  e  MUHAMMAD KUchh Aor Tha

AaKhir Khud aK Deen K Imaam Thay HUSSAIN

Afwaaj  e  Ehl  e  Bait K Salaar Thay HUSSAIN

Nasl  e  Rasul K Sahib  e  Dastaar Thay HUSSAIN

Qurbaani  e  Azeem Ko Tayyaar Thay Imaam

Phir Sajda  e  Shaoor Ki Saat Tulu Hui

Naizay Pe Aik Qayaamat Tulu Hui

                                                                                                                    Mansoor Afaq

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -