تھرا کے آسماں کو دیکھا حسینؑ نے

تھرا کے آسماں کو دیکھا حسینؑ نے
تھرا کے آسماں کو دیکھا حسینؑ نے

  

کہنے لگے زیاد کی پھر وہ سپاہ سے

اپنے لیے نہ دو مجھے کچھ آب گاہ سے

معصوم کی یہ پیاس کہے جو نگاہ سے

برداشت نہیں ہو رہی مجھ کجکلاہ سے

پھیری زباں لبوں پہ جو اس نورِ عین نے

تھرا کے آسماں کو دیکھا حسینؑ نے

لیکن ادھر تھے سنگ دلی کے لعینِ وقت

وحشت سے بھر چکی تھی مکمل جبینِ وقت

وہ ظالم کہ یزید کی بیعت تھی دینِ وقت

ترکش بنی ہوئی تھی ہر اک آستینِ وقت

نکلا پھر ایک تیر کمانِ قتال سے

ٹکرا گیا وہ آلِ محمدؐ کے لال سے

پانی جو مانگتا تھا گلہ خوں سے بھر گیا

باہر تمام سرخیِ اندروں سے بھر گیا

سورج بھی سرخ رنگ کے افسوں سے بھر گیا

صفحہ زمیں کا خون کے مضموں سے بھر گیا

ہائے لہو جو بہنے لگا تو امام نے

چلومیں بھر لیا گلِ خیرالانام میں

سوئے فلک اچھالا اسے اور یوں کہا

لے اے خدا حسینؑ نے وعدہ نبھا دیا

تو نے مطالبہ تھا براہیم سے کیا

ذبحِ عظیم میں ہوئی تاخیر بس ذرا

لے آج اُس کی نسل سے اس کاجواب لے

اجدا دکے چکا دیے سارے حساب ، لے

منصور آفاق

Kehnay Lagay Zayaad Ki Phir Wo Sipaah Say

Apnay Liay Na Do Mujahy Kuch Aab Gah Say

Masoom Ki Yeh Piaas Kahay Jo Nigaah Say

Bardaasht Nahen Ho Rahi Mujh Kajkulaah Say

Phairi Zubaan Labon Pe Jo Uss Noor  e  Ain Nay

Tharaa K Asmaan Ko Dekha HUSSAIN NAy

Lekin Udhar Thay Sangdili K Laeen  e  Waqt

Wehshat Sat Bhar Chuki Thi Mukammal Jabeen  e  Waqt

Wo Zulm K Baiat  e  Yazeed Thi Deen  e  Waqt

Turskash Bani Hui Thi har Aasteen  e  waqt

Nikla Phir Aik Teer Kamaan  e  Qaataal Say

Takra Gia Wio MUHAMMAD Ki Aal Say

Paani Jo Maangta Tha Gala Khoon Say Bhar Gia

Bahar Tamaam Surkhi  e Androon Say Bhar

Sooraj Bhi Surkh Rang K Afsoon say Bhar Gia

Safha Zameen Ka Khon K Mazmoon Say Bhar Gia

Hhaey lahu Jo Behnay Laga To IMAAM Nay

Chullu Men Bhar Lia Gul  e  Khair Ul Imaam Nay

Sooey Falak Uchaala Usay Aor Yun Kaha

Lay Ay Khuda HUSSAIN Nay Waada Nibha Dia

TU NAy Mutaalba Tha BARAHEEM Say Kia

Zibh  e Azeem Men Hui Takheer Bass Zara

Lay Aasj Uss Ki Nasl Say Uss Ka Jawaab Lay

Ajdaad K Chuka Diay Saaray Hissab , Lay

Mansoor Afaq

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -