فلسطین میں انسانی بحران سنگین صورت اختیار کر گیا ،اقوام متحدہ کی رپورٹ

فلسطین میں انسانی بحران سنگین صورت اختیار کر گیا ،اقوام متحدہ کی رپورٹ

                              مقبوضہ بیت المقدس: (ویب ڈیسک) اقوام متحدہ کی رپورٹ کے مطابق فلسطین کی نصف سے زائد آبادی بدترین صورت حال میں ہے۔ اقوام متحدہ کی رپورٹ کے مطابق 1963ءکے بعد سے یہ اب تک کی خراب ترین صورت حال ہے۔ غزہ میں زندگی دوبھر ہے اور بحران روز بروز سنگین ہوتا جا رہا ہے۔ نقل و حمل کی پابندیاں، خوراک کی کمی، بے گھر افراد غرض مسائل کی فہرست کافی طویل ہے۔ اقوام متحدہ کی رپورٹ میں بھی ایسے ہی کئی مسائل کی نشاندہی کی گئی ہے۔ رپورٹ کے مطابق اس سال 538 بچوں سمیت ڈیڑھ ہزار سے زائد فلسطینیوں کو شہید کر دیا گیا۔ ڈیڑھ سو کے قریب خاندانوں کے تین یا اس سے زائد افراد شہید ہوئے۔ رواں سال غزہ میں ایک لاکھ افراد آئی ڈی پی بن گئے جبکہ بارہ لاکھ افراد کیمپوں میں رہائش پذیر ہیں۔ اس سال اسرائیل نے فلسطینیوں کے بائیس ہزار مکانات تباہ کئے۔ چھ لاکھ افراد جزوی تباہ مکانات میں رہنے پر مجبور ہیں۔ بائیس ہزار سے زائد گھرانے ایسے ہیں جن کی کفالت خواتین کر رہی ہیں۔ غزہ میں تیرہ لاکھ افراد غذائی کمی کا شکار ہیں۔ مغربی کنارے میں اس سال تقریبا ایک ہزار فلسطینیوں کی جانیں اسرائیل نے لے لی اور ہزاروں سے زائد زخمی ہوئے۔ مغربی کنارے میں اس سال اسرائیل نے ساڑھے پانچ سو سے زائد تعمیرات تباہ کیں۔ بارہ سو کے قریب لوگ بے گھر ہوئے۔ سات لاکھ پینسٹھ ہزار افراد کیمپوں میں رہائش پذیر ہیں۔ دس لاکھ لوگ غذائی کمی کا شکار ہیں۔ 45 ہزار گھرانوں کی کفالت خواتین کر رہی ہیں۔

مزید : علاقائی