جوڈیشل کمیشن بنا تو سارے ثبوت منظر عام پر آجائیں گے،پرویز الٰہی

جوڈیشل کمیشن بنا تو سارے ثبوت منظر عام پر آجائیں گے،پرویز الٰہی

اسلام آباد (آن لائن) سابق وزیر اعلیٰ پنجاب چوہدری پرویز الٰہی نے انکشاف کیا ہے کہ سابق چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری اور جسٹس (ر)خلیل الرحمان رمدے عام انتخابات میں دھاندلی میں ملوث تھے، جوڈیشل کمیشن بنا تو سارے ثبوت منظر عام پر آجائیں گے، جوڈیشل کمیشن بنا تو فریق بنیں گے ،شہباز شریف کو چیلنج کرتا ہوں کہ ا پنے دس اور میرے پانچ سال کے ترقیاتی کاموں کا موازنہ کرلیں ۔ نجی ٹی وی کے پروگرام میں اظہار خیال کرتے ہوئے مسلم لیگ ق کے مرکزی رہنما کا کہنا تھا کہ نائن الیون کے سانحے کے بعد ہمارے دور اقتدار میں ہم پر بہت دباﺅ تھا ہم نے سکیورٹی پالیسی تشکیل دی، ہمارے دور میں پٹرولنگ پوسٹیں بنیں لیکن شہباز شریف نے آتے ہی ان پٹرولنگ پوسٹوں کا پٹرول بند کردیا جبکہ ان کا دو ہزار روپے الاﺅنس بھی ختم کردیا۔ ہماری حکومت نے جو پستول فراہم کئے تھے وہ بھی ان سے لے لیے گئے ،لاہور میں سری لنکن ٹیم پر حملہ ہوا تو ان کے پاس پستول نہیں تھے اگر ان کے پاس بھی دہشت گردوں کی طرح کوئی ہتھیار ہوتا تو وہ بھی چار دہشت گردوں کو مارتے۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے عمران خان کی ہسپتال میں عیادت کی تو ان سے دھاندلی سے متعلق جوڈیشل کمیشن پر بات ہوئی تھی اور کہا تھا کہ اگر جوڈیشل کمیشن بنا تو اس میں ہم فریق بنیں گے ۔عام انتخابات میں دھاندلی ہوئی ، ہماری 30 ایم این اے اور ساٹھ ایم پی اے کی نشستیں چھینی گئیں ۔ 2013 ءکے عام انتخابات میں سابق چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری ‘ اور جسٹس (ر) خلیل الرحمن رمدے دھاندلی میں ملوث تھے جوڈیشل کمیشن بنا تو سارے ثبوت منظر عام پر آجائیں گے۔ چوہدری پرویز الٰہی کا کہنا تھا کہ ڈاکٹر طاہر القادری کے ساتھ ہمارے دس نکات پر معاہدہ ہوا تھا ق لیگ ‘ سنی اتحاد کونسل اور وحدت المسلمین ان تینوں جماعتوں کا اتحاد تھا دھرنوں کامقصد پورا ہوا دھرنوں کے باعث آج حکومت جوڈیشل کمیشن بنانے پر آمادہ ہوئی دھرنوں کے باعث ہی آج لوگوں میں شعور آیا جس کی وجہ سے آج وی آئی پی کلچر کاخاتمہ ہوا اور پروازیں تاخیر کا شکار نہیں ہوتیں ۔انہوں نے کہا کہ حکومت کے ساتھ مفاہمت کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔

مزید : صفحہ اول