لیڈی ڈاکٹر کی غفلت ، نومولود ماں کے پیٹ میں ہلاک، لواحقین کا احتجاج

لیڈی ڈاکٹر کی غفلت ، نومولود ماں کے پیٹ میں ہلاک، لواحقین کا احتجاج

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


جیٹھہ بھٹہ(نامہ نگار)سرکاری ہسپتال کی لیڈی ڈاکٹر کی غفلت کے باعث نو مولود بچہ ماں کے پیٹ میں ہلاک اور زچہ کی حالت غیر ، دنیا میں آنے سے پہلے چل بسنے والے بچے کے باپ محنت کش الیکٹریشن کا لیڈی ڈاکٹر کے خلاف احتجاج۔ گذشتہ روز ارشاد کالونی کے رہائشی محنت کش ملک ریاض نے بتایا کہ میں اپنی بیوی نجمہ بی بی کو طبیعت خراب ہونے کی بناء پر صبح 8 بجے کے قریب تحصیل ہیڈ کوارٹر ہسپتال کے لیبرروم لے آیا جہاں پر ڈیوٹی پر موجود لیڈی ڈاکٹر آسیہ اور دیگر عملہ نے مریضہ پر کوئی توجہ نہیں دی(بقیہ نمبر35صفحہ12پر )
اور تقریباً6 گھنٹے ہسپتال میں گزارنے کے بعد لیڈی ڈاکٹر آسیہ نے ہمیں جواب دے دیا اور ہمیں کہا کہ مریضہ کا کیس پیچیدہ ہو گیا ہے اس کو رحیم یار خاں لے جاو یہاں پر بہوشی والا ڈاکٹر نہیں ہے اور میں اس کا آپریشن نہیں کرسکتی ، اسی دوران بچہ ماں کے پیٹ میں چل بسا اور نجمہ بی بی کی طبیعت بھی تاحال تشویشناک ہے زچہ بچہ کے لواحقین ایاز احمد، اشتیاق احمد، ملک فیاض، چوہدری سلیم، جام ندیم، ملک ایوب، خواجہ حفیظ، چوہدری شہزاد انور اور دیگر ٹی ایچ کیو کی لیڈی ڈاکٹر آسیہ کے خلاف میلاد چوک پر احتجاج کرتے ہوئے وزیر اعلیٰ پنجاب میاں شہباز شریف،صوبائی وزیر صحت ڈی سی او رحیم یار خاں سے مطالبہ کیا ہے کہ لیڈی ڈاکٹر کے خلاف سخت سے سخت کاروائی کی جائے۔رابطہ پر ایم ایس ٹی ایچ کیو ڈاکٹر آغا تو حید نے بتایا کہ مریضہ کے خاوند کو ہم نے بتا دیا تھا کہ زچگی میں پیچید گی ہے لہذا مریضہ کو رحیم یار خاں لے جاؤ مگر وہ نہ مانے اور آخر کار بچہ پیٹ کے اندر ہی دم توڑ گیا۔