ڈونگہ بونگہ میں فروخت ہونیوالی 70فیصد سبزی مضر صحت اور زہریلی ہونے کا انکشاف

ڈونگہ بونگہ میں فروخت ہونیوالی 70فیصد سبزی مضر صحت اور زہریلی ہونے کا انکشاف

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


ڈونگہ بونگہ(نامہ نگار)ڈونگہ بونگہ میں فروخت ہونیوالی 70فیصدسبزی مضر صحت اور زہریلی ہونے کا انکشاف، شہری موذی امراض کا شکار ہونے لگے ذرائع کے مطابق دوسرے شہروں سے آنے والی سبزی کے کھیتوں کو فیکٹریوں ، کارخانوں کے کیمیکل ملے زہریلے پانی سے سیراب کیا جا تا ہے اور تیار ہونے والی سبزی منڈیوں میں آنے کے بعد مارکیٹوں اور بازاروں میں فروخت کی جار ہی ہے ڈرینز اور سیم نالوں میں پائپ ڈال کر اور پیٹر انجن لگا کر کھیتوں کو سیراب کیا جا رہا ہے کیمیکل ملے گندے پانی سے تیار ہونیوالی مضر صحت سبزیاں ہیپا ٹائٹس، کینسر و دیگر امراض کا باعث بنتی ہیں دوسرے شہروں میں ہزاروں ایکڑ رقبہ پر آلو، ٹماٹر، ہری مرچ، بھنڈی توری، گھیا توری ، مٹر، شلجم، گوبھی، کدو، شملہ مرچ ،گاجر، ساگ، میتھی، پالک سمیت دیگر سبزیوں میں 70فیصد کھیتوں کو زہریلے پانی سے سیراب کیا جا رہا ہے اس سلسلہ میں ماہرین کا کہنا ہے کہ سبزی میں70 سے90فیصد پانی ہوتا ہے گندے پانی سے تیار ہونیوالی سبزیوں میں زہریلے مادے شامل ہو جا تے ہیں اور خاص طور پر ایسی سبزیاں جو کہ زیر زمین کاشت ہوتی ہیں جیسے شلجم، گاجر، مولی کینسر اور ہیپا ٹائٹس جیسے مہلک امراض کا باعث بنتی ہیں۔

مزید :

علاقائی -