مزدور تحریک کومنظم جدوجہد کرنے کی ضرورت ہے ٗپروفیسر شفیع ملک

      مزدور تحریک کومنظم جدوجہد کرنے کی ضرورت ہے ٗپروفیسر شفیع ملک

  



کراچی (اسٹاف رپورٹر)اٹھارویں آئینی ترمیم سے ٹریڈ یونین تقسیم اورپاکستان میں مزدور تحریک کمزور ہوئی ہے،مزدور تحریک میں آج باہمی اتحاد نہیں جس کے باعث مزدوروں کے لیے بے پناہ مسائل غربت، مہنگائی،بے روزگاری سمیت بنیادی مسائل شامل ہیں،آج ورلڈ بنک اور آئی ایم ایف ہمارے حکمران بنے ہوئے ہیں،ملک میں انجمن سازی کے حق کو پامال کیا جارہا ہے،نیشنل لیبر فیڈریشن نے ملک میں مزدوروں کے حقوق کی جدوجہد میں شاندار کردار انجام دیا ہے،مزدور کی کم از کم تنخواہ 35 ہزار روپے ماہانہ ہونی چاہیئے،نیشنل لیبر فیڈریشن نے 1969میں اپنے قیام کے بعد سے مزدوروں کی فلاح و بہبود کے لیے بھرپورکردار ادا کیا ہے،مزدوروں کو متحد کرنے اورتمام مزدور فیڈریشنز کو مشترکہ نکات پر ساتھ چلنے کے لیے ہمیشہ مل کر جدوجہد کی ہے۔ان خیالات کااظہار مقامی ہوٹل میں نیشنل لیبر فیڈریشن کی 50سالہ گولڈن جوبلی کے موقع پر دوروزہ سیمینار کے پہلے روز مقررین نے خطاب کرتے ہوئے کیا۔این ایل ایف کی گولڈن جوبلی کے موقع پر اس سیمینار کا اہتمام پاکستان ورکرز ٹریننگ اینڈ ایجوکیشن ٹرسٹ(وی ٹرسٹ) نے کیا تھا۔سیمینار میں پورے ملک سے این ایل ایف اور دیگر فیڈریشنز کے قائدین اور این ایل ایف سے وابستہ مرکزی یونینز، ریلوے، پی ٹی سی ایل، پاکستان اسٹیل، بلدیات،فرٹلائزر اور دیگر مزدور رہنماؤں نے بھی شرکت کی۔ پروگرام کل بروز اتواربھی جاری رہے گا جس میں ویب کوپ کے چیئرمین احسان اللہ خان، سابق سکریٹری خزانہ حکومت پاکستان ڈاکٹر وقار مسعود، آئی ایل او کے ڈائریکٹر صغیر بخاری،گورننگ باڈی کے نومنتخب رکن مزدور رہنما ظہور اعوان اور این ایل ایف پاکستان کے صدر شمس الرحمن سواتی بھی خطاب کریں گے جبکہ سیمینار میں این ایل ایف کی 50سال خدمات سرانجام دینے والے قائدین کو شیلڈز بھی تقسیم کی جائیں گی۔سیمینار کے افتتاحی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے، وی ٹرسٹ کے چیئرمین اور این ایل ایف پاکستان کے سابق صدر پروفیسر شفیع ملک نے مزدور تحریک کا ماضی،حال اور مستبقل کے موضوع پر خطاب کرتے ہوئے کہا کہ مزدور تحریک میں اب نظریاتی کشمکش اس طرح نہیں ہے جیساکہ ماضی میں تھی،آج ضرورت اس بات کی ہے کہ مزدور، فیڈریشنز مشترکہ نکات پر مل کر جدوجہدکریں، پاکستان کا1973کا دستور ہمیں انجمن سازی اوراجتماعی سوداکاری کا حق دیتا ہے، پاکستان کے مزدور ایک پلیٹ فارم پر جمع ہوجائیں تو ان کے مسائل کا حل بھی نکل آئے گا، مزدور تحریک کل پاکستان اتحاد کی جانب گامزن ہے۔ اپنے اہداف کو سامنے رکھیں تو ایک دن اپنی منزل کو حاصل کرلیں گے۔ سندھ لیبر فیڈریشن کے شفیق غوری نے پروفیسر شفیع ملک کی مزدور تحریک میں خدمات کو شاندار الفاظ میں خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہاکہ پروفیسر شفیع ملک اور این ایل ایف نے ہمیشہ تمام مزدور فیڈریشنز کو مزدور مسائل پر ساتھ چلنے کی دعوت دی، آج ضرورت اس امر کی ہے کہ تمام مزدور فیڈریشنز متحد ہوجائیں۔متحدہ لیبر فیڈریشن پاکستان کے سکریٹری جنرل قموس گل خٹک نے کہاکہ سندھ میں سہ فریقی ویلفیئراداروں میں آج غیر نمائندہ مزدوروں کو نمائندگی دے کر ٹریڈ یونینزکو نمائندگی سے باہر کردیا گیاہے،مزدور کی ڈیتھ گرانٹ،جہیز گرنٹ ختم ہوگئی ہے،مزدوروں کے بچوں کو اسکالر شپ نہیں مل رہی مکانات کی کمپیوٹرائز قرعہ اندازی بندکردی گئی ہے اور یہ سب جمہوریت کے نام پرہورہا ہے۔پائلر کے رہنما کرامت علی نے کہاکہ حق انجمن سازی محنت کشوں کا بنیادی حق ہے اس پر کوئی قدغن نہیں لگاسکتا،اپنی مرضی کی تنظیم بنانا ہرمحنت کش کا حق ہے۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر