بلوچستان میں آٹے کی قلت،قیمتیں بھی بڑھ گئیں،صوبائی حکومت کا نوٹس،2افسر معطل

  بلوچستان میں آٹے کی قلت،قیمتیں بھی بڑھ گئیں،صوبائی حکومت کا نوٹس،2افسر ...

  



کوئٹہ(آئی این پی) پورے ملک کو گیس فراہم کرنے والا صوبہ آٹے کی قلت کا شکار ہوگیا، بلوچستان کے مختلف اضلاع میں آٹے کی قیمت میں ہوشربا اضافے کے باعث شہریوں کی زندگی اجیرن ہوگئی۔تفصیلات کے مطابق بلوچستان کے عوام گندم جیسی بنیادی سہولت سے بھی محروم ہونے لگے، صوبے کے 33اضلاع میں آٹے کی قلت کا سامنا ہے جبکہ فی کلو قیمت میں بھی مسلسل اضافہ ہورہا ہے۔ایک ماہ کے دوران فی کلو آٹے کی قیمت 10 روپے بڑھ گئی، قیمتوں میں اضافے کی وجہ گندم کی عدم خریداری ہے۔ذرائع کا کہنا ہے کہ محکمہ خوراک نے پاسکو کو گندم کے 40فیصد ضرورت کا وقت پر نہیں بتایا، فلور مالکان کو گندم خریداری کی اجازت نہیں دی گئی، 20 کلو آٹے پر صارف کو اضافی 300 روپے دینا پڑ رہے ہیں۔دوسری جانب بلوچستان حکومت نے آٹے کی قلت اور قیمت بڑھنے پر نوٹس لے لیا۔ گندم کی بر وقت خریداری نہ کرنے پر محکمہ خوراک کے 2 افسر معطل کردیے۔ حکومت کا کہنا ہے کہ پاسکو کو 5 لاکھ بوری گندم خریداری و فراہمی کی سمری بھجوا دی ہے۔حکومتی ترجمان کا کہنا ہے کہ بہت جلد گندم کی فراہمی سے قیمتیں کم ہو جائیں گی، بلوچستان کے 33اضلاع میں ایک ماہ کے دوران فی کلو آٹا10روپے مہنگا ہوچکا ہے۔ مارکیٹ ذرائع کے مطابق گندم کی قلت اور فلور ملز کو رعایتی نرخوں پر گندم نہ ملنے کے باعث آٹے کی قیمتوں میں آئے روز اضافہ ہوا۔

 آٹے کی قلت

مزید : صفحہ آخر


loading...