بی آئی ایس پی میں اربوں کی کرپشن،زکوٰۃ خور سرکاری ملازمین کی فہرستیں انکے محکموں کو بھیجی جائیں گی:ثانیہ نشتر

بی آئی ایس پی میں اربوں کی کرپشن،زکوٰۃ خور سرکاری ملازمین کی فہرستیں انکے ...

  



لاہور(این این آئی)سماجی تحفظ اور غربت کے خاتمے کے بارے میں وزیراعظم کی معاون خصوصی ڈاکٹر ثانیہ نشتر نے کہا ہے کہ بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام سے مستفید ہونے والے غیر مستحق سرکاری ملازمین کی تفصیلات قانونی چارہ جوئی کیلئے ان کے متعلقہ شعبوں کو بھیجی جائیں گی۔سرکاری ریڈیو کے مطابق ایک ا نٹر ویو میں انہوں نے کہا کہ بینظیر انکم سپورٹ پروگرام کو مزید شفاف بنانے کی حالیہ مہم کے تحت مجموعی طور پر 8لاکھ 20 ہزار 165غیر مستحق مستفید ہونے والے افراد میں 14ہزار 730 افراد کی شناخت سرکاری ملازم کے طور پر ہوئی ہے۔مجموعی طور پر 8 لاکھ 20 ہزار 165 غیر مستحق خواتین کی شناخت ہو چکی ہے۔امعاون خصوصی نے کہا کہ پروگرام سے مستفید ہونے والے غیر مستحق افراد کے خلاف ضروری کارروائی کی جائیگی۔بینظیر انکم سپورٹ پروگرام سے فائدہ اٹھانے والے غیر مستحق افراد کے نکلنے سے مستحق افراد کی شمولیت کی راہ ہموار ہوگی۔اپنے ایک بیان میں ثانیہ نشتر نے کہا کہ حکومت نے بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام کے احساس کفالت پروگرام کے تقریباً 43 لاکھ مستحقین کی سہ ماہی گرانٹ پانچ ہزار روپے سے بڑھا کر ساڑھے پانچ ہزار کردی ہے۔انہوں نے کہاکہ اس اضافے کا مطلب یہ ہے کہ حکومت غریب ترین افراد کو نقد رقوم کی فراہمی کیلئے 8ارب 60کروڑ روپے اضافی فراہم کرے گی۔انہوں نے کہاکہ بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام سے 8لاکھ 20ہزار غیرمستحق افراد کو نکالنے کے بعد 42 لاکھ70 ہزار مستحق افراد رہ گئے ہیں،یہ اضافی وظیفہ صرف مستحق افراد کو دیاجائے گا۔دریں اثناء سابق ترجمان وزیر اعلیٰ پنجاب ڈاکٹر شہباز گل نے کہا ہے کہ تقریباً 8 لاکھ سے زائد امیر لوگوں کی جانب سے امداد اور زکو ۃ کے پیسے وصول کیے گئے جو قابل شرم بات ہے۔ٹوئٹر پر اپنے بیان میں انہوں نے کہا کہ بینظیر انکم سپورٹ پروگرام میں 2011 سے اب تک تقریباً 130 ارب روپے غلط طریقے سے لوٹے گئے۔ ڈاکٹرثانیہ اس نظام میں شفافیت لانے پر اور غریب کا پیسہ حقدار تک پہنچانے پر مبارکباد کی مستحق ہیں۔

ثانیہ نشتر

مزید : صفحہ آخر