نیب صدارتی آرڈیننس کا اجراء پارلیمنٹ کی توہین اور منتخب اداروں کو بے وقعت کرنے کی سازش ہے: پیر اعجاز ہاشمی

نیب صدارتی آرڈیننس کا اجراء پارلیمنٹ کی توہین اور منتخب اداروں کو بے وقعت ...
نیب صدارتی آرڈیننس کا اجراء پارلیمنٹ کی توہین اور منتخب اداروں کو بے وقعت کرنے کی سازش ہے: پیر اعجاز ہاشمی

  



لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن)جمعیت علمائے پاکستان کےسربراہ  پیر اعجاز  ہاشمی نےکہاہےکہ نیب صدارتی آرڈیننس کا اجراء پارلیمنٹ کی توہین اور منتخب اداروں کو بے وقعت کرنے کی سازش ہے،نیب ترمیمی آرڈیننس موجودہ حکومت کا ایک اوربڑا یوٹرن ہے،جس میں صرف حکومتی دوستوں کوتحفظ دیاگیا ہے،نیب کےذریعےاپوزیشن کوبد نام کیا جاتا رہاہے مگر جب اس متنازع ادارے نےبی آر ٹی پشاور کی تحقیقات کاارادہ کیاتوآرڈیننس کے ذریعے اسےمفلوج بناد یا گیا ہے۔

میڈیا سےگفتگو کرتے ہوئے پیر اعجاز احمد ہاشمی کا کہنا تھا کہ صدارتی آرڈیننس کا اجراء پارلیمنٹ کی توہین اور منتخب اداروں کو بے وقعت کرنے کی سازش ہے، نیب سیاسی انتقام کے لیے استعمال ہوتی چلی آرہی ہے،موجودہ حکومت نے اپوزیشن کو بدنام کرنے کے سابقہ تمام ریکارڈ توڑدیے ہیں۔ جے یو پی کے مرکزی صدر نے سابق وزیر قانون پنجاب رانا ثناء اللہ خان کی منشیات کیس میں ضمانت پررہائی کوسراہتے ہوئےکہاکہ ن لیگی رہنما کی زبان بند کرانے کے لئے اے این ایف جیسے ادارے کو بد نام کیا گیا،اَب عدالتوں کو چاہیے کہ باقی سیاسی قیدیوں کو بھی رہاکرے۔انہو ں نے کہا کہ سیاسی انتقام کا شکار کسی کو نہیں ہونا چاہیے،عدالتوں اور تحقیقاتی اداروں کو آزادی کے ساتھ کام کرنے دیا جائے اور عدلیہ میں کسی قسم کی مداخلت جمہوری اداروں کو کمزور کرنے کے مترادف ہو گی۔

مزید : علاقائی /پنجاب /لاہور


loading...