” دنیا میں پاکستان کا سافٹ امیج ابھارنے کی اشد ضرورت ہے“ ملکی صنعتکار کھل کر بول پڑے

” دنیا میں پاکستان کا سافٹ امیج ابھارنے کی اشد ضرورت ہے“ ملکی صنعتکار کھل کر ...
” دنیا میں پاکستان کا سافٹ امیج ابھارنے کی اشد ضرورت ہے“ ملکی صنعتکار کھل کر بول پڑے

  



لاہور (سٹاف رپورٹر) ملک کے ممتاز صنعتکاروں، عالمی امور کے ماہرین اور دانشوروں نے کہا ہے کہ دنیا میں پاکستان کا سافٹ امیج ابھارنے کی اشد ضرورت ہے اور اس مقصد کے لئے عام شہری سے سیاست دانوں، حکمرانوں اور تاجروں صنعت کاروں سمیت ہر شخص کا فرض ہے کہ وہ ورلڈ اکنامک فورم جیسے عالمی اداروں اور ایوانوں میں پاکستان کا مقدمہ نہ صرف لڑیں بلکہ اسے کامیابی سے بھی ہمکنار کرے۔ ان خیالات کا اظہار پاک فائینڈر گروپ اور کراچی کونسل آن فارن ریلیشنز کے اشتراک سے فیلیٹیز ہوٹل میں منعقدہ ورلڈ اکنامک فورم پوسٹ کانفرنس سے خطاب کے دوران کیا گیا۔

جس کی صدارت نامور صنعت کار اور پاتھ فائینڈر گروپ کے چیئرمین اکرام سہگل نے کی۔ جبکہ کانفرنس سے اخوت کے چیئرمین ڈاکٹر امجد ثاقب، ایکسل گروپ کے چیئرمین عادل منصور اے سی سی اے کے سربراہ ڈاکٹر سجید اسلم، رکن صوبائی اسمبلی عائشہ نواز چودھری اور سینئر صحافی کاظم علی خان نے بھی خطاب کیا۔ کانفرنس میں اظہار گروپ کے چیئرمین یعقوب طاہر، سائبان گروپ کے چیئرمین اعظم چیمہ، ایکسیڈائٹر کے چیئرمین اصغر محمود، اے بی ڈی پاکستان کے چیئرمین نجیب احمد، کاپر گروپ کے سی ای او میاں صفدر، مرحبا گروپ کے چیئرمین حکیم محمد عثمان،گوتھم کے سی ای او شفیق احمد،اینگرو گروپ کے ایڈوائزر شاہد ملک، برجر پینٹس کے سی او عبدالواحد اور وویمن چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کی صدر مس لبنیٰ بھی موجود تھیں۔ میزبانی کے فرائض پاتھ فائینڈر گروپ کے سی ای او فیروز احمد، ڈپٹی سی ای او ہما مظہر، ریجنل ڈائریکٹر کرنل (ر) کامران غفور اور مارکیٹنگ منیجر رانا زاہد نے انجام دیئے۔

وزیراعظم عمران خان کے ساتھ ورلڈ اکنامک فورم کی ڈیوس کانفرنس میں شرکت کے لئے جانے والے پاکستانی وفد کے قائد اکرام سہگل نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہم نے اس کانفرنس میں پاکستان کا سوفٹ امیج پیش کیا اور دنیا کو یہ بتایا کہ پاکستان ایک امن پسند اور لبرل سوچ کا حامل بہترین ملک ہے جہاں ہر شخص کی جان و مال اور عزت محفوظ ہے۔، حکومت پاکستان غیرملکی سرمایہ کاروں اور اقلیتوں کو ہر ممکن تحفظ فراہم کر رہی ہے اس حوالے سے جو پراپیگنڈہ ہمارے خلاف ہو رہا ہے اس میں کوئی صداقت نہیں، اکرام سہگل کا کہنا تھا کہ عمران خان ایک مخلص، سادہ اور درد دل رکھنے والے شخص ہیں جو صاف بات منہ پر کہنے کے عادی ہیں وہ ہر لمحے پاکستان کی ترقی کیلئے سوچتے اور سنجیدگی سے عمل کرنے کے عادی ہیں، انہوں نے کہا کہ یہ غلط تاثر پھیلایا گیا کہ میں نے اکنامک فورم میں شرکت کے لئے کروڑوں روپے خرچ کئے، وزیراعظم کی ہدایت پر تین رکنی کمیٹی نے اصل اخراجات میں سے 75فیصد کی کٹوتی کرکے نہایت معمولی رقم خرچ کی اور کانفرنس میں پاکستان کو عالمی سطح پر جو شہرت، عزت اور ساکھ ملی وہ اربوں میں بھی میسر نہیں آسکتی تھی اس کے مقابلے میں بھارت اربوں روپے خرچ کرکے بھی ہمارا مقابلہ نہیں کر پایا۔

انہوں نے کہا کہ ہم نے پاکستانی پویلین سے اپنے وطن عزیز کا نام روشن کیا۔ ضرورت اس امر کی ہے کہ ہر شخص اپنا تن من دھن پاکستان کے لئے وقف کردے۔ ہماری اولین خواہش ہونی چاہئے کہ عام لوگوں کے مسائل بھرپور انداز میں حل کئے جائیں، اس مقصد کے لئے ہمیں حکومتی سطح کی بجائے پرائیویٹ اداروں اور معاشی پلیٹ فارموں پر اپنا موقف پیش کرنا چاہئے۔ قبل ازیں اکرام سہگل کی جانب سے لاہور جم خانہ میں سینئر صحافیوں کے اعزاز میں تقریب کا اہتمام بھی کیا گیا جس میں اخبارات کے ایڈیٹرز، تجزیہ کار، اینکرزسمیت دانشوروں نے شرکت کی۔ جن میں ضیاءشاہد، سجاد میر، سلیم بخاری، میاں سیف الرحمن، سہیل وڑائچ، ایاز خان، نعیم مصطفےٰ، محسن گورایہ، کاظم خان، چوھری شہباز، ارشد پاشا، عائشہ بخش، ارم یاور، محمد یاور،، احمد ولید،رانا وحید سمیت دیگر شخصیات شامل تھیں۔

مزید : بزنس