کرونا وائرس انسانی جسم کو کس طرح متاثر کرتا ہے ؟ سائنسدانوں نے تازہ تحقیق میں انتہائی پریشان کن انکشاف کردیا

کرونا وائرس انسانی جسم کو کس طرح متاثر کرتا ہے ؟ سائنسدانوں نے تازہ تحقیق میں ...
کرونا وائرس انسانی جسم کو کس طرح متاثر کرتا ہے ؟ سائنسدانوں نے تازہ تحقیق میں انتہائی پریشان کن انکشاف کردیا

  



بیجنگ(مانیٹرنگ ڈیسک) پوری دنیا پہلے ہی کورونا وائرس کے خوف میں مبتلا ہے اور اب سائنسدانوں نے اس موذی وائرس کے متعلق ایسا ہولناک انکشاف کر ڈالا ہے کہ سن کر آپ کی پریشانی دوچند ہو جائے گی۔ میل آن لائن کے مطابق کورونا وائرس پر تحقیق کرنے والے سائنسدانوں نے بتایا ہے کہ کورونا وائرس کچھ عرصہ قبل پھیلنے والے وائرس ’سارس‘ سے 1ہزار گنا زیادہ خطرناک ہو سکتا ہے کیونکہ یہ انسانی جسم کو بالکل اسی طرح ابتلاءمیں ڈالتا ہے جیسے ایچ آئی وی اور ایبولا جیسے خطرناک وائرس ڈالتے ہیں۔

ابتداءمیں سائنسدانوں کا خیال تھا کہ کورونا وائرس بھی 2002-03ءمیں پھیلنے والی وبا سارس ہی کی طرح پھیلے گا لیکن اب چین کے علاقے تیان جن میں واقع ننکئی یونیورسٹی کے سائنسدانوں نے اس کے متعلق یہ ہولناک انکشاف کر دیا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ کورونا وائرس میں کچھ ایسے میوٹیٹڈ جینز (Mutated Genes)موجود ہیں جو سارس میں نہیں پائے جاتے تھے۔ اس کے علاوہ کورونا وائرس کی کلیویج سائٹس (Cleavage Sites)ایچ آئی وی اور ایبولا سے مشابہہ ہیں۔ چنانچہ کورونا وائرس سارس کی نسبت ایک طرف سینکڑوں گنا زیادہ تیزی سے پھیلنے اور اس کے ساتھ جسم کو زیادہ نقصان پہنچانے کی بھی صلاحیت رکھتا ہے۔ ممکنہ طور پر یہ سارس سے 100سے 1ہزار گنا زیادہ خطرناک ہو سکتا ہے۔

مزید : تعلیم و صحت