چین روس کاتجارتی سودے ڈالر نہیں اپنی کرنسیوں میں طے کرنے کا فیصلہ

چین روس کاتجارتی سودے ڈالر نہیں اپنی کرنسیوں میں طے کرنے کا فیصلہ

  

ماسکو(مانیٹرنگ ڈیسک) دنیا بھر کی کرنسیوں پر ڈالر کی حکمرانی ہی امریکی طاقت کی ضمانت ہے اور اس کے لیے امریکہ کسی بھی حد تک جانے کو تیار رہتا ہے۔ تاہم اب روس اور چین نے مل کر ایسا کام کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے کہ جان کر پورا امریکہ ہل کر رہ جائے گا۔ ’رشیا انسائیڈر‘ کی رپورٹ کے مطابق چین اور روس نے اپنے تجارتی سودے ڈالر کی بجائے اپنی کرنسیوں میں طے کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے۔ روس نے حال ہی 1ارب ڈالر مالیت کے سٹیٹ بانڈز جاری کرنے کا اعلان بھی کیا ہے اور اس میں امریکہ کیلئے پریشانی کی بات یہ ہے کہ روس یہ بانڈ ڈالر میں نہیں بلکہ چینی یوآن میں جاری کرے گا۔روس کی طرف سے ریاستی قرض بھی یوآن میں جاری کرنے کی تیاری شروع کر دی گئی ہے اور یوآن کے بین الاقوامی کرنسی بننے کی راہ میں اس کے متوازی قدم چائنہ پیٹرو یوآن ہے جس کے تحت تیل کے سودے بھی ڈالر کی بجائے یوآن میں کیے جائیں گے۔امکان ظاہر کیا جا رہا ہے کہ شنگھائی فیوچر ایکس چینج پر تیل کے معاہدے جلد یوآن میں ہونے شروع ہو جائیں گے۔ چینی ریگولیٹرز نے یوآن کے بین الاقوامی کرنسی کے معیار پر پورا اترنے کے تمام تجربات مکمل کر لیے ہیں۔

مزید :

علاقائی -