محکمہ آبپاشی میں متعدد افراد کیخلاف محکمانہ انکوائر یوں کے باوجود تر قیاں

محکمہ آبپاشی میں متعدد افراد کیخلاف محکمانہ انکوائر یوں کے باوجود تر قیاں

  

لاہور(نمائندہ پاکستان)محکمہ آبپاشی پنجاب میں سپرنٹنڈنٹ انجینئرز اور چیف انجینئرز کی پوسٹوں پر بیٹھے متعدد افراد کے خلاف محکمانہ انکوائریاں ہونے کے باوجود ان کی ترقیوں کے لیے تیاری کر لی گئی،18 جنوری کو محکمہ کی طرف سے جاری کی جانے والی لسٹ میں سولہ افراد میں ان کو شامل کیا گیا ،لسٹ کے مطابق سب سے سینئر کے عہدہ پر چیف انجینئر بہاولپور وقار وڑائچ کو رکھا گیا جن کے خلاف اینٹی کرپشن اور نیب میں انکوائری زیر التواء ہے۔محکمہ اریگیشن پنجاب میں سیکشن افسر کی جانب سے صوبہ کے مختلف ڈویژنز میں تعینات سپرنٹنڈنٹ انجینئرز اور چیف انجینئرز کی لسٹ فراہم کی گئی ہے جس میں محکمہ کو حکم جاری کیا گیا کہ لسٹ میں موجود سولہ افسروں کی ترقیاں کرنا مقصود ہیں اگر ان کے خلاف کوئی محکمہ جاتی یا کوئی دوسری انکوائری چل رہی ہے تو سیکشن افسر کو مطلع کیا جائے ۔یہ امر قابل ذکر ہے کہ ان سولہ افسروں کی لسٹ میں سب سے سینیئر پہلے نمبر پر چیف انجینئر بہاولپور وقار ورائچ کو رکھا گیا ہے جن کے بارے میں بہاولپور انٹی کرپشن میں بھی درخواست چل رہی ہے، فنڈز میں بڑے پیمانہ پر خورد برد کے الزام میں نیب میں بھی درخواست زیر التواہے۔معتبر ذائع کا کہنا ہے کہ ان افسروں کے خلاف محکمانہ انکوائریاں ہونے کے با جود انہیں نوازنے کے لیے اور ترقی دینے کے لیے آؤٹ آف ٹرن تیاری کی گئی ہے جس کا واضح ثبوت اس لسٹ میں وقار وڑائچ کا نام ہے جن کو انٹی کرپشن اور نیب میں ہونے کے باوجود سینیارٹی کے لحاظ سے سب سے اوپر رکھا گیا ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ وقار وڑائچ کی ریٹائرمنٹ رواں برس مارچ میں ہونی ہے اسی لیے روکنے کے باوجود ہر قسم کے بلز کمیشن لے کر پاس کیے جا رہے ہیں جس کے بارے میں نیب لاہور میں انکوائری چل رہی ہے۔

ترقیاں

مزید :

صفحہ آخر -