بنوں،پراجیکٹ ڈائریکٹر بی ڈی اے بنوں کا مسئلہ سنگین

  بنوں،پراجیکٹ ڈائریکٹر بی ڈی اے بنوں کا مسئلہ سنگین

  



بنوں (بیورورپورٹ)پراجیکٹ ڈائریکٹر بی ڈی اے بنوں کا مسئلہ سنگین ہوگیا پاکستان پیپلز پارٹی کے سابق ایم پی اے فخراعظم وزیر نے بی ڈی اے کے پراجیکٹ ڈائریکٹر کی تبدیلی کا مطالبہ کرتے ہوئے چند روز میں تبدیل نہ ہونے کی صورت میں عوامی طاقت سے دفتر سے نکالنے کا اعلان کردیا ٹاؤن شپ میں بی ڈی اے آفس کے باہر احتجاج کرنے والے ٹاؤن شپ کے رہائشیوں کے دھرنے سے خطاب کرتے ہوئے سابق ایم پی اے فخراعظم نے کہا کہ ہم کسی ایسے آفسر کو برداشت نہیں کریں گے جو کہ اس سیٹ کا اہل نہ ہو اور عوام کے مسائل حل کرنے میں دلچسپی نہیں لیتا ہو لہذا صوبائی حکومت اور ضلعی انتظامیہ اسے فوری طور پر تبدیل کردیں اور ٹیکنیکل پی ڈی کی تعیناتی کریں اس موقع پر انہوں نے ڈی ایس پی صدر سرکل عدنان شاہد کے ساتھ مذاکرات کئے اورواضح کیا کہ اگر جلد پی ڈی کا تبادلہ نہ کیا گیا تو عوامی طاقت سے اسے گھسیٹ کر دفتر سے نکالیں گے انہوں نے حکومت سے یہ بھی مطالبہ کیا کہ ٹاؤن شپ کے عوام کو وہ تمام سہولیات فراہم کئے جائیں جن کا ان سے وعدہ کیا گیا تھا اور جن سہولیات کی ان سے ٹیکس ودیگر طریقوں سے وصولی کی جاتی ہے انہوں نے مظاہرین کو یقین دہانی کرائی کہ وہ پی ڈی کے تبادلے تک ان کا ساتھ دیں گے اور اس سلسلے میں انکے والد ایم پی اے شیراعظم وزیر بھی اسمبلی فلور پر آواز اٹھائیں گے۔اس موقع پر حضرت جمال،ایوب،منیر احمد،چڈاکٹر عزیز الرحمن قریشی ودیگر مقررین نے کہا کہ ٹاؤن شپ میں پلاٹ خریدنے کیلئے ہمیں جنت کے خواب دکھائے گئے تھے اور ہم سے فیڈر کیلئے 4کروڑ روپے جمع کئے گئے لیکن بجلی مسائل اب بھی ٹاؤن شپ کے عوام کا مقدر ہیں گیس کیلئے 15کروڑ روپے رہائشیوں سے جمع کئے گئے ہیں گیس کا افتتاح بھی ہوچکا ہے اور مین گیٹ تک گیس آئی ہے لیکن مکینوں کو فراہم نہیں کی جاتی ہے کیونکہ مکینوں سے کمرشل ریٹ پر فراہمی ظلم ہے اسی طرح صفائی کا نظام درہم برہم ہے سیوریج کا نظام خراب ہے نالیاں گندگی سے بھر گئیں ہیں اور اس وجہ سے ٹاؤن شپ بیماریوں کی نرسری بن گئی ہے سڑکھیں کھنڈرات میں تبدیل ہوگئیں ہیں ٹاؤن کے قبرستان میں باہر سے کے مردوں کی تدفین کی جاتی ہے اور قبرستان میں مذید گنجائش نہیں ہے ٹاؤن شپ جانوروں کے بھاڑے میں تبدیل ہوگیا ہے بونڈری والی نہ ہونے کی وجہ سے مکین اپنے آپ کو غیر محفوظ تصور کرتے ہیں اور ٹاؤن شپ مسائلستان بن گیا ہے لہذا جب تک موجودہ پی ڈی کا تبادلہ نہیں کیا جاتا ہے ہمارا احتجاج جاری رہیگا اور ڈیپوٹیشن پر غیر ٹیکنیکل پی ڈی کو کسی صورت تسلیم نہیں کریں گے۔

مزید : پشاورصفحہ آخر