صوابی، 16لاکھ تاوان کی ادائیگی کیلئے اغواء 5سالہ لڑکا بازیاب

    صوابی، 16لاکھ تاوان کی ادائیگی کیلئے اغواء 5سالہ لڑکا بازیاب

  



صوابی(بیورورپورٹ)صوابی پولیس نے 16لاکھ روپے تاوان کے لئے اغوا ء کئے جانے والے پانچ سالہ بچے کو چوبیس گھنٹے کے اندر اندر بازیاب کر کے تین اغواء کاروں کو گرفتار کر لیا۔ ڈی پی او صوابی عمران شاہد نے اپنے آفس میں ہنگامی پریس کانفرنس میں تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ پانچ سالہ بچہ عمر فاروق ولد محمد نعمان سکنہ زیدہ حال حیات آباد پشاور اپنے ماموں ظہار علی شاہ ولد عبدالغنی سکنہ بنارس کالونی صوابی کی شادی میں شرکت کے لئے اپنی والدہ کے ہمراہ گذشتہ روز صوابی آئے تھے اتوار کے روز وہ گلی میں دیگر بچوں کے ساتھ کھیل رہے تھے کہ نامعلوم ملزم یا ملزمان نے ان کو اٹھا کر ایک موٹر کار میں بٹھا کر لے گئے صوابی پولیس نے مغوی بچے کے ماموں عمران علی شاہ کی رپورٹ پر نامعلوم اغواء کاروں کے خلاف ایف آئی آر درج کر کے تفتیش شروع کر دی انہوں نے بتایا کہ اس واقعہ پر بذات خود میں نے سخت ایکشن لیا اور ایس پی انوسٹی گیشن بنارس خان کی سر براہی میں ڈی ایس پی جان زادہ خان، ڈی ایس پی انوسٹی گیشن ظریف خان اور ایس ایچ او فاروق خان پر مشتمل ایک خصوصی ٹیم تشکیل دی جنہوں نے مخبر کی اطلاع پر مردان میں کاشف علی ولد ثمر گل سکنہ کنال روڈ مردان کے گھر سے بازیاب کیا جسے ملزمان نے اپنے ہمراہ رکھا تھا اور بچے کی بازیابی کے لئے سولہ لاکھ روپے کا مطالبہ کر رہے تھے انہوں نے بتایا کہ پولیس نے ملزمان جواد سید سکنہ شگئی مانیری بالا، آیاز خان سکنہ صوابی، اکرام اللہ سکنہ گاڑ صوابی اور کاشف علی سکنہ کنال روڈ مردان کو گرفتار کر لیا۔مغوی کے رشتہ داروں نے بتایا کہ ملزمان ان کے رشتہ دار تھے اور بچے کو سویٹ کھلانے کے بہانے گلی سے باہر لے گئے اور وہاں کھڑی موٹر میں بٹھا کر بونیر اور بعد ازاں مردان منتقل کر دیا انہوں نے بچے کی تاوان کے بغیر بحفظات بچے کی بازیابی پر ڈی پی او عمران شاہد اور پوری تفتیشی ٹیم کا شکریہ ادا کیا۔

مزید : پشاورصفحہ آخر