اسرائیلی وزیراعظم نیتن یاہو پر کرپشن کا الزام، فرد جرم عائد

  اسرائیلی وزیراعظم نیتن یاہو پر کرپشن کا الزام، فرد جرم عائد

  



تل ابیب (مانیٹرنگ ڈیسک)اسرائیل کے وزیراعظم بینجمن نیتن یاہو کی جانب سے پارلیمانی استثنیٰ کی درخواست واپس لیتے ہی عدالت نے ان پر کرپشن کے الزام پر باقاعدہ فرد جرم عائد کردی۔غیر ملکی خبر ایجنسی 'رائٹرز' کی رپورٹ کے مطابق اسرائیل کے وزیر اعظم بینجمن نیتن یاہو اس وقت امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے مشرق وسطیٰ کے امن منصوبے کے اعلان کے سلسلے میں ان سے ملاقات کے لیے واشنگٹن میں موجود ہیں، جبکہ اٹارنی جنرل نے یروشلم کی عدالت میں فرد جرم کے لیے دستاویزات پیش کیں۔رپورٹ کے مطابق استثنیٰ کی درخواست ابتدا سے ناکامی سے دوچار تھی کیونکہ ایوان (کنیسٹ) میں اس کی منظوری کے لیے مطلوبہ اکثریت حاصل نہیں تھی جبکہ نیتن یاہو نے الزامات کو مسترد کردیا تھا۔نیتن یاہو کی جانب سے استثنیٰ لینے کی کوشش کو مکمل طور پر ناکام بناتے ہوئے فرد جرم عائد کردی گئی ہے لیکن یہ واضح نہیں ہے کہ مقدمے کی کارروائی میں مہینے لگیں گے یا برسوں تک یہ مقدمہ چلتا رہے گا۔اسرائیلی وزیراعظم کو نہ صرف عدالتی کارروائی کا سامنا ہے بلکہ وہ سیاسی میدان میں بھی سخت جنگ سے دوچار ہیں جہاں انہیں مارچ میں انتخابات میں جانا ہے جو اسرائیل میں ایک سال کے اندر تیسرے انتخابات ہوں گے کیونکہ گزشتہ اپریل اور ستمبر میں منعقدہ انتخابات کے نتائج فیصلہ کن ثابت نہیں ہوئے تھے۔

فرد جرم عائد

مزید : صفحہ آخر