پختون حکومت کے ساتھ ہیں،پی ٹی ایم سے مذاکرات اپنی جگہ لیکن قانون توڑنے والے کوگرفتار کیا جائے گا:بریگیڈیئر(ر) اعجاز شاہ

پختون حکومت کے ساتھ ہیں،پی ٹی ایم سے مذاکرات اپنی جگہ لیکن قانون توڑنے والے ...
پختون حکومت کے ساتھ ہیں،پی ٹی ایم سے مذاکرات اپنی جگہ لیکن قانون توڑنے والے کوگرفتار کیا جائے گا:بریگیڈیئر(ر) اعجاز شاہ

  



اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن) وفاقی وزیرِ داخلہ بریگیڈیئر(ر) اعجاز شاہ نے کہا ہے کہ پی ٹی ایم سے مذاکرات اپنی جگہ لیکن اگر کوئی ملک کا قانون توڑے گا تو  اُسے  گرفتار کیا جائے گا،پختون اس حکومت کے ساتھ ہیں۔

برطانوی خبر رساں ادارے سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے   وفاقی وزیرِ داخلہ بریگیڈیئر(ر)اعجاز شاہ کا کہنا تھا کہ وزیرِاعظم عمران خان کامؤقف ہےکہ اگر آپ کسی چیز کا حل چاہتے ہیں تو ٹیبل پر آئیں،جنگ اورلڑائی سے کوئی چیز حل نہیں ہوتی،یہ ملک، قبائل اور برادری کے لیے اچھا ہے،جہاں تک بات ہے پختونوں کی تو ہماری جماعت کی دو تہائی اکثریت ہے،عمران خان پختونوں اور قبائلی علاقوں میں اپنے ضلع سے زیادہ مشہور ہیں،سابق قبائلی علاقوں کے انضمام اور پختونوں کو قومی دھارے میں شامل کرنے کے بارے میں جو اُنہوں نے کیا ہے وہ کسی اور سیاسی رہنما نے نہیں کیا تو رہنما کون ہوا پشتین یا عمران خان؟۔وفاقی وزیرِ داخلہ بریگیڈیئر(ر) اعجاز شاہ نے کہا کہ پشتون تحفظ موومنٹ کے ساتھ بات چیت بھی ہو رہی ہے تاہم مذاکرات کا یہ مطلب نہیں کہ  اگر کسی نےکوئی جرم کیا ہے تو اُسے پکڑا نہیں جائے گا ؟

 قانون ساز اداروں کو اپنا کام کرنا ہوتا ہے،جو بات کرنے والے ہیں وہ کر رہے ہیں،اگر وہ غلط کام کریں گے تو وہ پکڑے جائیں گے۔اُنہوں نے کہا کہ منظور پشتین کےخلاف ڈیرہ اسماعیل خان میں مقدمہ درج ہوا ہے جس کے بعد اُن کو گرفتار کیا گیا ہے،کل پرسوں جو اُن کے دوسرے رکنِ قومی اسمبلی ہیں، وہ بہت اچھے انسان ہیں، وہ ملک اور اداروں کے خلاف غلط الفاظ استعمال کررہے تھے اور اُن کو پکڑ لیا گیا، یہ کل کی بات ہے۔وفاقی وزیرِ داخلہ بریگیڈیئر(ر) اعجاز شاہ  کا  کہنا تھا کہ احتجاج کرنے کا مہذب طریقہ بھی ہےلیکن یہ طریقہ غلط ہےاور وہ غلط طریقے سے احتجاج کر رہے تھے، عدالتیں آزاد ہیں اور عدالتیں ہی مقدمے کا فیصلہ کریں گی۔

مزید : قومی