شاہی خاندان کا بوسیدہ ماضی گواہ انہیں مرضی کا ریفری اور میدان چاہیے: فردوس عاشق

شاہی خاندان کا بوسیدہ ماضی گواہ انہیں مرضی کا ریفری اور میدان چاہیے: فردوس ...

  

 لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک) معاون خصوصی اطلاعات پنجاب فردوس عاشق اعوان نے کہا ہے جھوٹوں کی راجکماری کو جسٹس قیوم جیسے ججز ہی بھا تے ہیں، جو آنکھیں بند کر کے نا صرف ان کے حق میں فیصلے دے بلکہ مخالف کو سزا قانون کی بجائے کرپٹ شاہی خاندان کی مرضی و منشا کے مطابق سنائے، شاہی خاندان کا بوسیدہ ماضی گواہ ہے انہیں اپنی مرضی کا ریفری اور میدان چاہیے۔گزشتہ روز سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹو ئٹرپر اپنے ٹویٹ میں انکا مزید کہنا تھا وزیراعظم نے کھلے دل سے براڈ شیٹ تحقیقات کا اعلان کیا، بغلیں بجانے والے چیلے، کنیزیں اب گھبر اہٹ کا شکار ہیں، جسٹس (ر) عظمت سعید کو براڈشیٹ کمیشن سے الگ ہونے کا مشورہ دینے والی نانی اماں نے پانامہ سکینڈل میں سیاہ کرتو ت سامنے آنے پر اپنے ابا جی کو وزارت عظمی سے الگ ہونے کا مشورہ کیوں نہ دیا؟۔قبل ازیں پاکستان ایڈورٹائزنگ ایسوسی ایشن (پی ا ے اے) اور آل پاکستان نیوز پیپر سوسائٹی (اے پی این ایس) کے مشترکہ وفد نے اسپیشل اسسٹنٹ ٹو چیف منسٹر پنجاب فار انفارمیشن ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان سے ملاقات کی۔جس میں میڈیا انڈسٹری کو درپیش مسائل کے حوالے سے تفصیلی تبادلہ خیال ہوا جن میں موجودہ ایڈو ر ٹائزمنٹ پالیسی اور اشتہارات کی مد میں ادائیگیوں کے مسائل سر فہرست تھے۔ فردوس عاشق اعوان نے مسائل کو نہ صرف سنا بلکہ یہ یقین د ہا نی بھی کروائی کہ بہت جلد ان کو حل کر لیا جائے گا۔ میڈیا انڈسٹری اور حکومت ایک ہی گاڑی کے دو پہیئے ہیں اور میڈیا انڈسٹری کے مسائل کو حل کرنے کیلئے وزیر اعلی پنجاب عثمان بزدار خصوصی دلچسپی لے رہے ہیں۔ اس موقع پر فردوس عاشق اعوان نے ایک کمیٹی بھی تشکیل دی جس میں چیئرمین پاکستان ایڈورٹائزنگ ایسوسی ایشن جواد ہمایوں ٹاسک دیا گیا کہ ایک ہفتہ کے اندر اپنی سفارشات مرتب کرکے ارسال کریں، جن پر فوری عملدرآمد کرکے میڈیا انڈسٹری کو موجودہ مسائل سے نکالا جاسکے۔

فردوس عاشق اعوان

مزید :

صفحہ اول -