تجاوزات کیخلاف آپریشن بند‘ طاقتور مافیا ریلوے اراضی ہتھیانے کیلئے پھر متحرک

 تجاوزات کیخلاف آپریشن بند‘ طاقتور مافیا ریلوے اراضی ہتھیانے کیلئے پھر ...

  

کوٹ ادو(تحصیل رپورٹر) محکمہ ریلوے حکام کی ملک بھر میں ریلوے کی اربوں روپے کی اراضی پر قابض افراد کو قبضے چھوڑنے کی وارننگ بیان تک محدود ہے‘ آپریشن بھی کام نہ آسکا،ریلوے ٹریک کی بیش قیمتی اراضی پر تجاوزات کا سلسلہ جاری،تجاوزات کے خلاف آپریشنل کارروائی بند ہوتے ہی لینڈ مافیا پھر سرگرم ہوگیا،کوٹ ادو ریلوے اسٹیشن سے ریلوے کراسنگ (بقیہ نمبر42صفحہ 7پر)

تک تجاوزات قائم، ریلوے لائن کے سامنے رہنے والے مکینوں کے بھی قبضے،کئی پرائیویٹ سکولوں نے گراسی پلاٹ بنا کر وہاں ڈیرے جما لئے،عملہ بے بس،ریلوے کی اراضی کمپیوٹرائز کرنے اور تجا وزات مافیا کا ڈیٹا اکھٹے کرنے کے باوجود عملی کام نہ ہوسکا، تفصیل کے مطابق محکمہ ریلوے  نے ملک بھر میں ریلوے کی اربوں روپے کی اراضی پر قابض افراد کو قبضے چھوڑنے کی وارننگ اور ملک بھر میں ریلوے کی اراضی کو کمپیوٹرائز کرنے کا حکم جاری کیا تھا،جس کے مطابق پا کستان بھر میں 1لاکھ 65ہزار 2سو 98ایکڑزمین ہے،اس حوالے سے محکمہ ریلوے نے زمین کمپیو ٹرائزڈ کی تو پا کستان بھر میں محکمہ کی18ہزار 3سو 45ایکڑزمین پرمختلف لوگوں کے قبضے ہونے کا انکشاف ہوا ہے جس پر دکانیں، مکان، شو روم اور پلازے تعمیر ہیں جبکہ مذکورہ زمین پر قبضہ کرنے والے گروپوں کی تعداد2 لاکھ 74ہزار 9سو41ہے جن کے نام، ایڈریس اور قبضہ کی ہوئی جگہ کی تصا ویر سمیت دیگر معلومات اکٹھی کر لی گئی تھیں، محکمہ کی جانب سے تجا وزات مافیا کا ڈیٹا تو اکٹھا کر لیا گیا تھا لیکن تا حال اس ما فیا کے خلاف کار روائیاں عمل میں نہیں لا ئی گئی،جس پر ابھی تک ہزاروں ایکڑ اراضی پر مافیا قابض ہے جس کے سامنے محکمہ بے بس ہے یا پھراس مافیا کے خلاف جان بوجھ کر کا رروائی کرنے سے گریزاں ہے جس کی وجہ سے محکمہ کو سالانہ کروڑوں روپے نقصان کا سامنا ہے،دوسری طرف تجاوزات کے خلاف چندروز قبل اپریشن کرکے ریلوے کراسنگ کے قریب کھڑے پھٹہ رکشون اور رہڑھیوں  والوں سے فی رہڑھی اور پھٹہ رکشہ سے3ہزار روپے وصولیاں کیں تھیں جبکہ انہیں وارننگ بھی جاری کی گئی تھی مگر آپریشنل کارروائی بند ہوتے ہی ریلوے ٹریک کی بیش قیمتی اراضی پرکوٹ ادو میں قبضہ مافیا دوبارہ سرگرم عمل ہے،محکمہ ریلوے کی اراضی پر قبضے جمانے والے بااثر قبضہ مافیا نے ریلوے اسٹیشن کے عملہ اور ریلوے پولیس کی ملی بھگت سے کوٹ ادو ریلوے اسٹیشن سے لے کر شمالی وجنوبی ریلوے کراسنگ تک تجاوزات قائم کی ہوئی ہیں جہاں بجری سیمنٹ اینٹوں کا وسیع پیمانے پر کاروبار کیا جارہا ہے اور اس مافیا نے ریلوے کی اراضی پر تعمیرات بھی کی ہوئی ہیں،جبکہ ریلوے کراسنگ کے ارد گرد رکشہ اسٹینڈ،کار اسٹینڈ کے علاوہ خوانچہ فروشوں نے قبضہ جما رکھا ہے، دوسری طرف شمالی ریلوے کراسنگ سے گڑھی قریش تک ٹریک پر پچھلے کئی برسوں سے ریلوے لائن کے سامنے رہنے والے مکینوں کے بھی قبضے کئے ہوئے ہیں جبکہ کئی پرائیویٹ سکولوں کے مالکان نے ریلوے کی اراضی پرگراسی پلاٹ بنا کر وہاں ڈیرے جما لئے ہیں،شہریوں نے چیف جسٹس آف پاکستان،وزیر اعظم عمران خان،وفاقی وزیر ریلوے اعظم سواتی سمیت دیگر اعلیٰ حکام سے اراضی واگزار کرانے اور تجاوزات ختم کرانے کا مطالبہ کیا ہے۔

متحرک

مزید :

ملتان صفحہ آخر -