قومی ٹیم نے پروٹیز کی بیٹنگ لائن کے پرخچے اڑا دئیے، دوسری اننگز میں کتنے رنز پر آؤٹ کر دیا اور جیت کیلئے کیا ہدف ملا؟ پاکستانیوں کیلئے شاندار خوشخبری

قومی ٹیم نے پروٹیز کی بیٹنگ لائن کے پرخچے اڑا دئیے، دوسری اننگز میں کتنے رنز ...
قومی ٹیم نے پروٹیز کی بیٹنگ لائن کے پرخچے اڑا دئیے، دوسری اننگز میں کتنے رنز پر آؤٹ کر دیا اور جیت کیلئے کیا ہدف ملا؟ پاکستانیوں کیلئے شاندار خوشخبری
سورس:   Twitter

  

کراچی (ڈیلی پاکستان آن لائن) پاکستان اور جنوبی افریقہ کی کرکٹ ٹیموں کے درمیان کراچی ٹیسٹ میچ کے چوتھے روز پاکستانی باؤلرز نے جنوبی افریقہ کی بیٹنگ لائن کو تہس نہس کرتے ہوئے دوسری اننگز میں محض 245 رنز پر آؤٹ کر دیا ہے اور یوں اسے جیت کیلئے 88 رنز کا آسان ہدف ملا ہے۔ 

تفصیلات کے مطابق نیشنل سٹیڈیم کراچی میں جاری پہلے ٹیسٹ میچ کے تیسرے روز پاکستانی ٹیم 378 رنز بنا کر آﺅٹ ہوئی اور جنوبی افریقہ کیخلاف 158 رنز کی برتری حاصل کی جس کے جواب میں پروٹیز نے دوسری اننگز میں پاکستانی باؤلرز کا خوب ڈٹ کر مقابلہ کیا اور دو وکٹوں کے نقصان پر پاکستان کی برتری ختم کر دی اور تیسرے روز کا کھیل ختم ہونے تک چار وکٹوں کے نقصان پر 187 رنز بنائے۔ پروٹیز کی جانب سے ایڈن مارکرم اور ڈین ایلگر نے اننگز کا آغاز کیا اور پہلی وکٹ کی شراکت میں 48 رنز جوڑے تاہم اس موقع پر یاسر شاہ نے ڈین ایلگر کو اپنے جال میں پھانس لیا اور محمد رضوان نے فل ڈائیو کرتے ہوئے شاندار کیچ لیا، وہ 45 گیندوں پر چار چوکوں کی مدد سے 29 رنز بنا سکے۔ 

پہلی وکٹ گرنے کے بعد ایڈن مارکرم اور ریسی وینڈرڈوسن نے پاکستانی باؤلرز کو خوب آڑے ہاتھوں لیا اور ان کی ایک نہ چلنے دی۔ دونوں نے گراؤنڈ کے چاروں جانب دلکش سٹروکس کھیلتے ہوئے ناصرف اپنی اپنی نصف سنچریاں مکمل کیں بلکہ پاکستان کو پہلی اننگز میں حاصل ہونے والی برتری ختم کر کے میچ ایک مرتبہ پھر دلچسپ بنا دیا تاہم 175 کے مجموعی سکور پر یاسر شاہ نے اپنا کمال دکھاتے ہوئے پاکستان کو دوسری کامیابی دلا دی اور ریسی وینڈرڈوسن کو عابد علی کے ہاتھوں کیچ کروا دیا، وہ 151 گیندوں پر چھ چوکوں کی مدد سے 64 رنز بنانے میں کامیاب ہوئے۔ 

ٹیسٹ میچ کے چوتھے روز کیشوو مہاراج اور کوینٹن ڈی کوک نے 187 رنز چار کھلاڑی آؤٹ پر اننگز کا آغاز کیا تو پاکستانی باؤلرز سب کو حیران کر دینے کے موڈ میں نظر آئے اور حسن علی نے کھیل شروع ہوتے ہی کیشوو مہاراج کو دو کے انفرادی سکور پر کلین بولڈ کر دیا۔ 192 کے مجموعی سکور پر کوینٹن ڈی کوک بھی ہمت ہار بیٹھے اور دو رنز بنا کر یاسر شاہ کی گیند پر عابد علی کے ہاتھوں کیچ ہو گئے۔ جنوبی افریقہ کی ساتویں وکٹ 234 کے مجموعی سکور پر گری اور جارج لینڈے 11 رنز بنا کر نعمان علی کی گیند پر عمران بٹ کے ہاتھوں کیچ ہو گئے۔ مجموعی سکور میں محض چار رنز کے اضافے کے بعد کاگیسو ربادا بھی صرف ایک سکور بنا کر نعمان علی کی گیند پر کلین بولڈ ہوئے۔ 240 کے مجموعی سکور پر اینرچ نورٹجے بھی کوئی سکور بنائے بغیر نعمان علی کا شکار بن گئے اور فواد عالم نے ان کا کیچ لیا۔ جنوبی افریقہ کی آخری وکٹ 245 کے مجموعی سکور پر گری اور ٹیمبا باووما 40 رنز بنا کر نعمان علی کی گیند پر ایل بی ڈبلیو ہو گئے۔ 

قبل ازیں پاکستان کے حسن علی اور نعمان علی نے 308 رنز آٹھ کھلاڑی آؤٹ سے اننگز کا آغاز کیا تو 323 کے مجموعی سکور پر حسن علی 21 رنز بنا کر کاگیسو ربادا کی گیند پر کلین بولڈ ہو گئے جبکہ 378 کے مجموعی سکور پر پاکستان کی آخری وکٹ گری اور ٹیسٹ ڈیبیو کرنے والے نعمان علی 24 رنز بنا کر کیشو مہاراج کی گیند پر ایل بی ڈبلیو ہو گئے۔ 

پاکستان کی جانب سے فواد عالم نے مشکل وقت میں ذمہ دارانہ بلے بازی کرتے ہوئے 109 رنز کی اننگز کھیلی اور سب سے نمایاں بیٹسمین رہے جبکہ دیگر کھلاڑیوں میں اظہر علی 51، وکٹ کیپر بلے باز محمد رضوان 33، فہیم اشرف 64، عمران بٹ نو، عابد علی چار، بابراعظم سات، شاہین آفریدی صفر اور یاسر شاہ 38 رنز بنانے میں کامیاب ہوئے۔ 

جنوبی افریقہ کی جانب سے تمام باؤلرز نے ہی اچھی کارکردگی کا مظاہرہ کیا ہے تاہم فاسٹ باولر کاگیسو ربادا اور سپنر کیشو مہاراج نے تین، تین کھلاڑیوں کو پویلین کی راہ دکھائی جبکہ لونگی نگیڈی اور اینرچ نورٹجے نے دو، دو کھلاڑیوں کو آؤٹ کیا۔ 

واضح رہے کہ جنوبی افریقہ نے ٹاس جیت کر بیٹنگ کرنے کا فیصلہ کیا تو پاکستانی باؤلرز نے عمدہ کارکردگی کا مظاہرہ کرتے ہوئے پروٹیز کو پہلی اننگز میں 220 رنز پر آؤٹ کر دیا۔ یاسر شاہ نے سب سے زیادہ تین وکٹیں حاصل کیں جبکہ ڈیبیو میچ کھیلنے والے نعمان علی نے دو شکار کئے۔ 

جنوبی افریقہ کے ڈین ایلگر اور ایڈن مارکرم نے اننگز کا آغاز کرتے ہوئے پہلی وکٹ کی شراکت میں 30 رنز جوڑے تاہم اس موقع پر قومی ٹیم کے نوجوان فاسٹ باؤلر شاہین شاہ آفریدی نے پہلی کامیابی دلاتے ہوئے ایڈن مارکرم کو پویلین کی راہ دکھا دی، وہ 16 گیندوں پر 13 رنز بنا کر عمران بٹ کے ہاتھوں کیچ ہوئے۔ 

پروٹیز کی دوسری وکٹ 63 کے مجموعی سکور پر اس وقت گری جب ریسی وینڈرڈوسن نے فہیم اشرف کی گیند پر بھاگ پر رن لینے کی کوشش کی مگر دوسرے اینڈ پر موجود ڈین ایلگر نے ان کی کال کو مسترد کر دیا جس پر انہیں آدھی وکٹ سے واپس جانا پڑا تاہم اس سے پہلے ہی محمد رضوان نے بابراعظم کی زبردست تھرو پکڑتے ہوئے انہیں رن آؤٹ کر دیا، وہ 30 گیندوں پر تین چوکوں کی مدد سے 17 رنز بنا سکے۔ 

ڈین ایلگر اور فاف ڈوپلیسی نے چائے کے وقفے کے بعد 94 رنز سے اننگز کا آغاز کیا تو 108 کے مجموعی سکور پر لیگ سپنر یاسر شاہ نے قومی ٹیم کو تیسری اور اہم کامیابی دلاتے ہوئے فاف ڈوپلیسی کو محمد رضوان کے ہاتھوں کیچ کروا دیا، وہ 46 گیندوں پر چار چوکوں کی مدد سے 23 رنز بنانے میں کامیاب ہو سکے۔ ڈیبیو ٹیسٹ میچ کھیلنے والے نعمان علی نے بھی اپنی مہارت کے جوہر دکھائے اور 133 کے مجموعی سکور پر کپتان کوینٹن ڈی کوک کو پویلین کی راہ دکھائی اور پھر مجموعی سکور میں محض تین رنز کے اضافے کے بعد ہی ڈین ایلگر کو بھی آؤٹ کر دیا، دونوں کھلاڑی بالترتیب 15 اور 58 رنز بنانے میں کامیاب ہوئے۔ 

مہمان ٹیم کی چھٹی وکٹ 179 کے مجموعی سکور پر اس وقت گری جب ٹیمبا باووما 17 رنز بنا کر رن آؤٹ ہو گئے۔ چائے کے وقفے کے بعد پروٹیز کی جانب سے کیشوو مہاراج اور جارج لینڈے نے اننگز کا آغاز کیا تو مجموعی سکور میں بغیر کسی اضافے کے یاسر شاہ نے کیشو مہاراج کو صفر کے انفرادی سکور پر کلین بولڈ کر دیا۔ 194 کے مجموعی سکور پر جارج لینڈے کی مزاحمت بھی جواب دے گئی جو 35 رنز بنا کر حسن علی کی گیند پر محمد نواز کے ہاتھوں کیچ ہو گئے۔ جنوبی افریقہ کے آخری آؤٹ ہونے والے کھلاڑی لونگی نگیڈی تھے جنہوں نے آٹھ رنز بنائے اور شاہین شاہ آفریدی کی گیند پر ایل بی ڈبلیو ہو گئے۔ 

پاکستان کی جانب سے تمام باؤلرز نے ہی اچھی کارکردگی کا مظاہرہ کیا ہے تاہم لیگ سپنر یاسر شاہ نے تین کھلاڑیوں کو پویلین کی راہ دکھائی جبکہ ڈیبیو میچ کھیلنے والے نعمان علی اور شاہین شاہ آفریدی نے دو، دو وکٹیں حاصل کیں ، حسن علی ایک کھلاڑی کو آؤٹ کرنے میں کامیاب ہوئے۔ 

مزید :

کھیل -