کورونا وائرس اور مردانہ بانجھ پن، جرمن سائنسدانوں نے انتہائی خطرناک وارننگ دیدی

کورونا وائرس اور مردانہ بانجھ پن، جرمن سائنسدانوں نے انتہائی خطرناک وارننگ ...
کورونا وائرس اور مردانہ بانجھ پن، جرمن سائنسدانوں نے انتہائی خطرناک وارننگ دیدی

  

برلن(مانیٹرنگ ڈیسک) کورونا وائرس کے کئی طویل مدتی طبی نقصانات کے متعلق ماہرین پہلے ہی بتا چکے ہیں۔ اب جرمن سائنسدانوں نے مردوں کی جنسی صحت کے لیے بھی اس کے تباہ کن طویل مدتی نقصان کا انکشاف کر دیا ہے اور بتا دیا ہے کہ یہ موذی وائرس مردوں کو بانجھ بھی بنا رہا ہے۔ میل آن لائن کے مطابق جرمن شہر گیسین کی جسٹس لیبیگ یونیورسٹی کے سائنسدانوں نے کورونا وائرس سے صحت مند ہونے والے سینکڑوں مردوں پرکی گئی اس تحقیق کے نتائج میں بتایا ہے کہ کورونا وائرس مردوں کے سپرمز کی شکل ہی تبدیل کر دیتا ہے جس کے بعد وہ خاتون کے بیضوں سے اختلاط کی صلاحیت سے ہی محروم ہو جاتے ہیں۔

کورونا وائرس کے مردوں کی جنسی صحت کے لیے اس براہ راست نقصان کے علاوہ وائرس سے لاحق ہونے والی انفلیمیشن دوسرا عوامل ہے جس کے ذریعے وائرس مردوں کے تولیدی نظام کو نشانہ بنارہا ہے۔ کورونا وائرس سے جسم میں پیدا ہونے والی انفلیمیشن مردوں کے افزائش نسل کے ٹشوز کو مستقل طور پر نقصان پہنچا کر انہیں بانجھ بنا سکتی ہے۔ ایک بالواسطہ طریقہ ہارمون لیولز کا بگاڑ اور ذہنی دباﺅ ہے جس کے ذریعے کورونا وائرس مردانہ جنسی صحت کو تباہ کر رہا ہے۔ سائنسدانوں کا کہنا تھا کہ اس طریقے سے جسم میں آکسیڈیٹوسٹریس بہت زیادہ بڑھ جاتا ہے جو مردانہ جنسی صحت کے لیے انتہائی نقصان دہ ہوتا ہے۔سائنسدانوں نے کورونا وائرس سے صحت مند ہونے والے مردوں کو مشورہ دیتے ہوئے کہا کہ انہیں صحت مندی کے بعد اپنی تولیدی صحت کا چیک اپ ضرور کروانا چاہیے اور اگر وباءمیں مبتلا ہونے سے اس میں کوئی پیچیدگی آئی ہے تو اس کا فوری طور پر علاج کروانا چاہیے۔

مزید :

تعلیم و صحت -کورونا وائرس -