سینیٹر ساجد میر  نے  وقف املاک قانون کے خلاف مزاحمت کرنے کا  اعلان کردیا 

سینیٹر ساجد میر  نے  وقف املاک قانون کے خلاف مزاحمت کرنے کا  اعلان کردیا 
سینیٹر ساجد میر  نے  وقف املاک قانون کے خلاف مزاحمت کرنے کا  اعلان کردیا 

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) مرکزی جمعیت اہلِ حدیث پاکستان کےسربراہ سینیٹرپروفیسرساجدمیر نےکہاہےکہ وقف املاک قانون مساجد اور مدارس کےخلاف ہے، ہم مزاحمت کریں گے،سینٹ نے وقف املاک ایکٹ مسترد کردیا تھا،مشترکہ اجلاس میں شوروغوغا کرکے منظور کرالیا گیا، ایف اے ٹی ایف کے دباؤ پر دینی مدارس ومساجدکے خلاف کی گئی قانون سازی قبول نہیں،شعائر اسلام کے خلاف کوئی پابندی قبول نہیں کریں گے۔

تفصیلات کےمطابق سینیٹر ساجد میر کا کہنا تھا کہ ملک بھر کے دینی مدارس ومساجد وقف املاک ایکٹ کو غیر شرعی قراردے چکے ہیں،دینی قیادت کو اعتماد میں لیے بغیر اس ایکٹ پر عمل درآمد مشکل ہو گا،دینی مدارس ومساجد قیامت تک آبادرہیں گے، کوئی طاقت شعائراسلام پرقدغن نہیں لگاسکتی،یہ قانون نہ صرف اسلامی تعلیمات اور ہماری روایات بلکہ آئین پاکستان اور قانون کے بھی خلاف ہے، تمام مساجد اور مدارس اس قانون کی مزاحمت کریں گے اور اس سلسلے میں تمام مکاتب فکر ایک ہی صفحے پر ہیں۔

اُنہوں نے کہا کہ اس قانون کا بل قومی اسمبلی سے منظور نہیں کروایا جا سکا تاہم بعد ازاں اسے پارلیمان کے دونوں ایوانوں کے مشترکہ اجلاس کے سامنے پیش کرکے قانون کی شکل دے دی گئی، یہ قانون  پاکستان میں مساجد و مدارس کے بارے میں عالمی استعمار کے اس مبینہ ایجنڈے کی تکمیل کا فیصلہ کن قدم ہوگا جس سے ڈیڑھ سو سال سے دینی تعلیم و عبادت کا آزادانہ کردار باقی نہیں رہے گا،ہم اس  قانون میں متنازع شقوں کو نکالنے کا مطالبہ کرتے ہیں۔

مزید :

علاقائی -پنجاب -لاہور -