سیلابی صورتحال میں سکولوں میں سمر کیمپ لگانے کا فیصلہ واپس لیا جائے،والدین،اساتذہ

سیلابی صورتحال میں سکولوں میں سمر کیمپ لگانے کا فیصلہ واپس لیا ...

لاہور(خبرنگار) پرائمری ،مڈل و سکینڈری سکولوں کے طلبہ وطالبات کے والدین و اساتذہ نے سکولز ایجو کیشن ڈیپارٹمنٹ پنجاب کی طرف سے سیلابی صورتحال میں یکم اگست سے سکولوں میں سمر کیمپ لگانے کے اعلان پر شدید احتجاج کرتے ہوئے اس فیصلے کو فوری واپس لینے کا پُر زور مطالبہ کیا ہے ۔طلبہ و طالبات کے والدین و اساتذہ بالخصوص خواتین اساتذہ نے کہا ہے کہ ایک طرف پنجاب بھر میں ہنگامی سیلابی صورتحال میں وزیر اعلیٰ پنجاب پنجاب بھر کے ہنگامی دورے کرکے سیلاب زدگان کی امدادی کارروائیوں مصروف عمل ہیں دوسری طرف سیلابی صورتحال قبل از وقت یکم اگست سے سکولوں کو کھولنے اور سمر کیمپ لگانے کا اعلان پنجاب حکومت کے خلاف سازش ہے۔طلبہ و طالبات کے والدین کا کہنا ہے کہ مون سون کی تیز بارشوں کا سلسلہ اگست میں مزید تیز ہو سکتا ہے اس سیلابی صورتحال میں سکولوں میںیکم اگست سے سمر کیمپ لگانے سے سکولوں میں آنے والے بچوں اور اساتذہ کے ساتھ حادثات رونما ہو سکتے ہیں ۔

۔

۔

۔

۔

انہوں نے وزیر اعلیٰ پنجاب اور وزیر تعلیم سے پُر زور مطالبہ کیا ہے کہ مون سون کی بارشوں کے نتیجے میں پیدا ہونے والی سیلابی صورتحال کے پیش نظر یکم اگست سے سکولز کھولنے کا فیصلہ واپس لیا جائے اور سکولوں کی تعطیلات میں ستمبر تک تو سیع کی جائے ۔

مزید : میٹروپولیٹن 4