غلام مصطفی اور ذیشان نے شدید زخمی ہونے کے باوجود مقابلہ کیا

غلام مصطفی اور ذیشان نے شدید زخمی ہونے کے باوجود مقابلہ کیا

فیصل آباد(بیورورپورٹ)اس مقابلہ کاایک بہت ہی اہم اور ناقابل فراموش پہلو یہ بھی ہے کہ پہلی نظر میں چاروں کانسٹیبل نے کراس کرتی ہوئی دہشت گردوں کی گاڑی کو نظر انداز کر دیا مگر دوسری نظر میں وہ انہیں مشکوک محسوس کرکے واپس پلٹے اور موٹر سائیکل گاڑی کے آگے کر کے انہیں روک لیا دہشت گردوں نے ایک لمحے کی بھی تاخیر بھی نہیں کی اور سیدھا برسٹ آگے بڑھتے ہوئے موٹر سائیکل سواروں حسیب اور ذیشان پر مارا حسیب تو فوری شہید ہو گئے مگر ذیشان نے اپنے حواس پر قابو رکھا اور جوابی فائرنگ کر دی جبکہ دوسرے دونوں کانسٹبیلوں غلام مصطفی او رشعیب نے بھی اپنی جانیں بچانے کی بجائے بھرپور مقابلہ کیا اورا پنے اپنے حواس قائم رکھے غلام مصطفی اور ذیشان نے شدید زخمی ہونے کے باوجود میدان میں کھڑے ہو کر پولیس کی ایک نئی تاریخ رقم کی اس دوران پولیس کی بھاری نفری پہنچنا شروع ہو گئی تاہم اس وقت دہشت گرد وہاں سے نکل جانے میں کامیاب ہو چکے تھے.

مزید : صفحہ اول