افغانستان میں لوگ پانی کی جگہ بھی شراب پینے لگے، نوجوان نسل بری طرح متاثر

افغانستان میں لوگ پانی کی جگہ بھی شراب پینے لگے، نوجوان نسل بری طرح متاثر
افغانستان میں لوگ پانی کی جگہ بھی شراب پینے لگے، نوجوان نسل بری طرح متاثر

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

کابل (اے این این) غیر ملکی افواج کی برکت سے افغانستان مے خانے میں تبدیل ہو گیا ہے اور لوگ پانی کی جگہ بھی شراب پینے لگے ہیں، چھوٹے کریانہ سٹور سے ڈیپارٹمنٹل سٹور تک ہر جگہ اچھی شراب 20افغانی کے عوض فروخت ہونے لگی۔

ایک غیر ملکی اخبار کے مطابق کابل جہاں شراب نوشی کی ممانعت تھی اب وہ الکوحل سے بھر پور دارالحکومت بن چکا ہے ۔نوجوان نسل مغربی ذائقوں کے اتنا رسیا ہوگئے ہیں کہ کابل کی دکانیں اور بازار شراب کے خریداروں سے بھر گئے ہیں۔ ایک دکاندار فاروق نے اخبار ی نمائندے سے گفتگو کرتے ہوئے کہاکہ کابل الکوحل فری سٹی بن چکاہے ۔

اس نے کہاکہ وہ شراب کی ایک بوتل 20افغانیز میں فروخت کررہاہے جو 0.30امریکی ڈالر کے برابر ہے ۔فاروق کا کہناہے کہ لوگ شراب پینے کو بالکل بھی برامحسوس نہیں کرتے بلکہ ایسا لگتاہے کہ جیسے شراب ان کے رگ و پے میں شامل ہو۔ ایک اور دکاندار اقبال نے کہاکہ وہ روزانہ درجنوں بوتلیں شراب بیچتا ہے جبکہ اس کے گاہکوں میں زیادہ تر نوجوان اور ٹیکسی ڈرائیور شامل ہیں ۔

مزید : بین الاقوامی