اسرائیل کا یہودی آباد کاری کا نیا منصوبہ اشتعال انگیزی ہے: امریکا

اسرائیل کا یہودی آباد کاری کا نیا منصوبہ اشتعال انگیزی ہے: امریکا
اسرائیل کا یہودی آباد کاری کا نیا منصوبہ اشتعال انگیزی ہے: امریکا

  

واشنگٹن (اے پی پی) مریکا نے مقبوضہ مشرقی بیت المقدس میں اسرائیل کے یہودی آبادکاروں کو بسانے کے لیے سیکڑوں نئے مکانوں کی تعمیر کے منصوبے کو اشتعال انگیز قرار دیتے ہوئے اس کی مذمت کی ہے اور کہا ہے کہ اس سے فلسطینیوں کے ساتھ امن کے امکان پر گہرے منفی اثرات مرتب ہوں گے۔امریکی محکمہ خارجہ کے ترجمان جان کربی نے ایک بیان میں کہا ہے کہ'ہمیں شائع ہونے والی رپورٹس پر گہری تشویش لاحق ہے جن میں اسرائیل کی جانب سے مشرقی القدس میں 323 یونٹوں (مکانوں) کی تعمیر کے لیے ٹینڈرز جاری کیے گئے ہیں۔قبل ازیں ایک یہودی بستی گیلو میں 770 یونٹوں کی تعمیر کے منصوبے کا اعلان کیا گیا تھا''۔ترجمان کا کہنا ہے کہ ''اسرائیلی حکام کی جانب سے یہودی آبادکاری کی سرگرمی کو تیز رفتاری سے رو بہ عمل لانے کی یہ تازہ مثالیں ہیں۔اس سے بڑے منظم انداز میں دو ریاستی حل کے لیے امکانات کو نقصان پہنچایا جارہا ہے۔ہم اسرائیل کے اس اشتعال انگیز اور جوابی منفی اقدامات کے حامل انداز پر مشوش ہیں۔اس سے اسرائیل کے فلسطینیوں کے ساتھ تنازعے کے پرامن اور مذاکرات کے ذریعے حل سے متعلق عزم کے بارے میں سنجیدہ سوالات پیدا ہوگئے ہیں''۔انھوں نے مزید کہا ہے۔فلسطینی قیادت اور اقوام متحدہ نے قبل ازیں مشرقی بیت المقدس کے جنوب میں واقع یہودی بستی گیلو کی توسیع اور وہاں 770 نئے مکانوں کی تعمیر کے منصوبے کی مذمت کی تھی۔

مزید :

بین الاقوامی -