ہسپتالوں میں اموات ، کوئی پوچھنے والا نہیں ، جانچ پڑتال کی کمیٹیاں غیر فعال

ہسپتالوں میں اموات ، کوئی پوچھنے والا نہیں ، جانچ پڑتال کی کمیٹیاں غیر فعال

لاہور(جاوید اقبال) صوبائی دارلحکومت کے ہسپتالوں میں ڈاکٹروں اور عملہ کی غفلت سے ہونے والی اموات کی جانچ پڑتال کے لئے بنائی گئی کمیٹیاں غیر فعال ہو گئی ہیں جس کے باعث ہسپتالوں میں ہونیو الی غیر طبعی اموات کے سرجیکل اور میڈیکل آڈٹ کا نظام دم توڑ گیا ہے چیک اینڈ بیلنس نہ ہونے سے ہسپتالوں میں شر ح اموات میں اضافہ ہو گیا ہے ۔رپورٹ کے مطابق واحد میوہسپتال ایک ایسا مرکز صحت ہے کہ جس کے میڈیکل سپرٹنڈنٹ ڈاکٹر طاہر خلیل نے چیف ایگزیکٹو پروفیسر اسد اسلم خان کی منظوری سے مارٹیلٹی کمیٹی بنانے کے لئے وی سی کے ایم یو کو مراسلہ بھجوایا گیا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ مارٹیلٹی کمیٹی کے لئے چئیرمین اور ممبران کے ناموں کی منظوری دی جائے مگر یہ مراسلہ ابھی وی سی کے دفتر میں ہی پڑا ہے شہر کے دیگر ہسپتالوں میں نہ کوئی کمیٹی موجود ہے نہ ہی متعلقہ ایم ایس کی طرف سے اپنے پرنسپل اور وی سی کو یہ کمیٹیاں قائم کرنے کی کوئی سفارش کی گئی ہے ۔بتایا گیا ہے کہ ہر ہسپتال میں کئی سال پہلے تک ہونے والی غیر طبعی اموات کی وجوہات جاننے کے لئے اور اموات کی جانچ پڑتال کے لئے کمیٹیاں تشکیل دی گئیں قواعد و ضوابد کے مطابق کمیٹی میں مختلف شعبہ جات کے پروفیسرز اور دیگر ماہرین کو شامل کیا گیا تھا ہر کمیٹی کا ہفتہ وار اجلاس ہونا ضروری تھا اور ہر ہفتے اجلاس میں ہر ہسپتال میں ایسی اموات جو غیر طبعی طور پر یا ڈاکٹڑوں کی غفلت سے ہوئی ہو اس کی وجوہات کا تعین کرنا اور غفلت ثابت ہونے پر متعلقہ عملے اور ڈاکٹروں کے خلاف کاروائی تجویز کرنا تھا مگر سالہا سال سے یہ ہر ہسپتال کی کمیٹی ابھی تک بھی غیر فعال ہے اور کسی کمیٹی کا سال میں بھی ایک اجلاس نہیں ہو سکا یہی وجہ ہے کہ ہسپتالوں میں شرح اموات میں اضافہ ہو گیا ہے اس طرف نہ ہسپتال کی کسی انتظامیہ نے کوئی توجہ دی ہے اور نہ ہی محکمہ صحت نے یہ کمیٹیاں غیر فعال ہونے کے باعث ڈاکٹڑوں اور عملے پر چیک اینڈ بیلنس بھی ختم ہو کر رہ گیا ہے اور آئے روز کسی نی کسی ہسپتال کے کسی نہ کشی وارڈز میں ان ڈاکٹروں کی غفلت سے اموات ہو رہی ہیں جس کا سرجیکل اور میڈیکل آڈٹ نہیں ہو پارہا ہے ۔اس حوالے سے وزیر صحت خواجہ سلمان رفیق کا کہنا ہے کہ ہر ہسپتال میں غیر طبعی اموات کی جانچ پڑتال کے لئے کمیٹیاں فوری طور پر فعال بنائی جائیں گی جس ہسپتال میں کمیٹی غیر فعال ہوئی اور مہینے میں کم از کم اس کا اجلاس نہ ہوا تو اس کے خلاف کاروائی کریں گے ہر کمیٹی کی رپورٹ خود حاصل کروں گا اور اس پر کاروائی بھی ہو گی ۔

مزید : میٹروپولیٹن 1