پناہ گزین کی محبت میں گرفتار خاتون کے خلاف کارروائی شروع

پناہ گزین کی محبت میں گرفتار خاتون کے خلاف کارروائی شروع

  

فرانس(این این آئی)ایرانی پناہ گزین کی محبت میں گرفتار ہونے والی فرانس کی ایک قوم پرست خاتون کے خلاف مقدمے کی کارروائی شروع ہوگئی ہے۔میڈیا رپورٹ کے مطابق بیئٹرس ہیورے پر الزام ہے کہ انھوں نے مختار نامی ایرانی تارک وطن کو ایک کشتی خرید کر دی جس پر بیٹھ کر وہ اپنے دو ساتھیوں کے ہمراہ انگلش چینل عبور کر کے غیر قانونی طور پر برطانیہ پہنچ گیا جہاں اسے پناہ دے گئی ہے۔بیئٹرس پر اگر جرم ثابت ہوگیا تو انھیں دس برس قید کی سزا ہو سکتی ہے۔عدالت غور کر رہی ہے کہ بیئٹرس ہیورے کہیں کسی انسانی سمگلروں کے منظم گروہ کی ممبر تو نہیں۔ ہیورے ایک سابق سرحدی پولیس اہلکار کی بیوہ ہیں۔بیئٹرس ہیورے نے عدالت کے باہر میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ مجھے معلوم ہے کہ میں نے کیا کیا ہے لیکن میں نے جو کچھ کیا وہ انسانی ہمدردی کے تحت کیا۔رپورٹ کے مطابق بیئٹرس ہیورے کو پریشانی ہے کہ اگر انھیں سزا ہوگئی تو وہ اپنے محبوب سے کبھی نہیں مل پائیں گی۔ بیئٹریس ہیورے اپنے محبوب سے ملنے کے لیے اکثر برطانیہ کا سفر کرتی رہی ہیں۔بیئٹرس ہیورے کے وکیل نے بتایا کہ وہ عدالت سے استدعا کریں گی کہ ان کے خلاف مقدمے کو خارج کر دیا جائے ۔

کیونکہ انھوں نے جو کچھ کیا وہ انسانی ہمدردی کے تحت کیا۔البتہ بیئٹرس ہیورے نے کہاکہ اگر انھیں اپنے مجبوب مختار کے لیے یہی کچھ ایک بار پھر بھی کرنا پڑے تو وہ ایسا کرنے سے گریز نہیں کریں گی۔بیئٹرس ہیورے نے پناہ گزین سے محبت اور برطانیہ پہنچنے میں مدد کے واقعات کو ایک کتاب کیلے مون امورمیں بیان کیا انھوں نے کتاب میں لکھا کہ جب وہ ایک سرد شام کو کام سے گھر لوٹ رہی تھیں تو انھوں نے ترس کھا کر ایک پناہ گزین کو اپنی کار میں سوار ہونے دیا اور کیلے میں پناہ گزینوں کے کیمپ میں پہنچا دیا۔ جب انھوں نے کیلے میں پناہ گزینوں کے کیمپ کو دیکھا تو پھر سب کچھ بدل گیا۔

مزید :

عالمی منظر -