ہیلو! عید مبارک، موبائل فون نے متائیں دوریاں، بڑھا احساس قربت

ہیلو! عید مبارک، موبائل فون نے متائیں دوریاں، بڑھا احساس قربت

ملتان(جنرل رپورٹر) عیدالفطر کے موقع پر بیرون ملک اور دیگر شہروں میں مقیم عزیز و اقارب دوست احباب کو عید ملنے اور انہیں مبارکباد دینے کا بڑا ذریعہ ایس ایم ایس، ای میل اور موبائل فون رہے۔ ہر شہری نے اپنے موبائل فون یا سم میں موجود تمام جان پہچان رکھنے والوں، کاروباری حضرات، عزیز و اقارب اور دوست احباب کو ایس ایم ایس پیغامات بھجوائے اور بڑی تعداد میں موبائل فون، فکسڈ فون اور ای میل کے ذریعے پیغامات بھجوا کر فاصلوں کو سمیٹ دیا اور قربت کا احساس پیدا کیا۔ گرمی کی شدت کے باعث عید الفطر کے پہلے دو روز پارکوں‘ہوٹلوں‘ ریسٹورنٹ اور دیگر تفریحی مقامات پر لوگوں کا رش انتہائی معمولی رہا جبکہ گزشتہ تیسرے روز موسم خوشگوار ہونے کے باعث لوگوں کی بڑی تعداد گھروں سے نکل کر تفریحی مقامات پر پہنچ گئی۔ رش کے باعث شہر کے اکثر مقامات پر ٹریفک بھی جام رہی لوگ فٹ پاتھوں‘ گلیوں ‘بازاروں میں سے گزر کر منزلوں پر پہنچتے رہے ۔جبکہ ٹریفک پولیس کی جانب سے بھی چالانوں پر پابندی کے باعث ایک ایک موٹرسائیکل پر چار چار افراد بیٹھ کر سفر کرتے رہے۔ میٹھی عید پر سویاں ، پھینیاں ، شیر خورمہ جیسے من پسند روایتی پکوان دستر خوانوں کی زینت بنے رہے ۔ عید الفطر جسے عمومی طور پر میٹھی عید بھی کہاجاتا ہے کے موقع پر سویاں اور میٹھے پکوان خصوصی طور پر تیار کئے جاتے ہیں۔ دیگر غیر رویتی مٹھائیاں اور تیار حلوہ جات جتنے بھی لذیذ کیوں نہ ہوں روایتی پکوانوں کے بغیر عید پھیکی اور ادھوری رہتی ہے عیدالفطر کے موقع پر دکانوں اور بیکریوں پر خریداروں کا رش رہا جس کا فائدہ اٹھاتے ہوئے انہوں نے منہ مانگے دام وصول کئے۔ عیدکے موقع پر عزیز و اقارب سے ملنے جانے والے اپنے پیاروں کیلئے کیک، مٹھائیاں، پھول اور گلدستے ساتھ لے کر جاتے ہیں۔ اس موقع پر فائدہ اٹھاتے ہوئے جہاں کیک، پیسٹری اور مٹھائی کے کاریگروں اور مالکان کی چاندی رہی وہاں گل فروشوں نے منہ مانگے دام وصول کئے۔ عام دنوں میں 150 سے 200 روپے فروخت ہونے والا گلدستہ 300 روپے میں فروخت ہوا جبکہ اپنے پیاروں کی قبروں پر ڈالی جانے والی پھولوں کی پتیاں اور چادریں بھی مہنگے داموں فروخت ہوتی رہیں۔ ۔

مزید : ملتان صفحہ آخر