بجلی کی قیمت میں ایک روپیہ25پیسے اضافہ قابل مذمت ہے،میاں مقصود

بجلی کی قیمت میں ایک روپیہ25پیسے اضافہ قابل مذمت ہے،میاں مقصود

  



لاہور ( سٹی رپورٹر)متحدہ مجلس عمل پنجاب کے صدر اور امیرجماعت اسلامی پنجاب میاں مقصود احمدنے نیپراکی جانب سے بجلی کی قیمتوں میں اضافے پراپنے شدیدردعمل کااظہارکرتے ہوئے کہاہے کہ بجلی کے فی یونٹ میں ایک روپیہ25پیسے اضافہ انتہائی قابل مذمت ہے،اس سے ملک میں مہنگائی کاطوفان آئے گا اور عوامی مشکلات میں بے پناہ اضافہ ہوجائے گا،بجلی مہنگی کرنے سے صارفین پر15ارب 70کروڑ روپے کابوجھ بڑھ جائے گا،نگران وزیر اعظم ناصر الملک اس کانوٹس لیں اور اضافے کوفی الفور واپس لینے کے احکامات جاری کریں۔انہوں نے کہاکہ نگران حکومت نے اپنے پہلے ماہ ہی پٹرولیم مصنوعات کے نرخوں،بجلی اور گیس کی قیمتوں میں اضافہ کرکے یہ ثابت کردیا ہے کہ حکمرانوں کوعوام کے مسائل کاٹھیک طرح ادراک ہی نہیں۔ایک طرف عوام کوتوانائی بحران کاسامناکرناپڑرہا ہے،گھنٹوں غیراعلانیہ لوڈشیڈنگ کی جارہی ہے،اووربلنگ سے عوام کی زندگی اجیرن بنادی گئی ہے تودوسری طرف رہی سہی کسر بجلی مہنگی کرکے پوری کردی گئی ہے۔

انہوں نے کہاکہ مسلم لیگ(ن)نے2018میں لوڈشیڈنگ کے خاتمے کے بلندوبانگ دعوے کیے تھے۔کاغذی منصوبے بھی بنائے جاتے رہے کمیشن مافیابھی پوری طرح سرگرم رہااور اس نے اپنا کمیشن کمایابھی مگربدقسمتی سے عوامی فلاحی منصوبے تاحال مکمل نہیں ہوسکے۔توانائی بحران دن بدن سنگین ہورہاہے۔برسات کاموسم شروع ہوچکا ہے اس کے باوجودسسٹم میں کوئی بہتری نہیں آسکی۔توانائی بحران کے خاتمے کے لیے ضروری ہے کہ متبادل ذرائع اور آپشن پرعمل درآمد کیاجائے۔نئے ڈیمز بنانے کے حوالے سے چیف جسٹس کے ریمارکس حوصلہ افزا ہیں۔اگر چھوٹے بڑے ڈیمزبنانے کے منصوبوں پر کام شروع کردیاجائے توملک کو بدترین لوڈشیڈنگ سے نجات مل جائے گی اورزراعت بھی کی ترقی بھی ہوگی جس سے پاکستان خوشحال ہوگا۔ ضرورت اس امر کی ہے کہ ذاتی مفادات سے بالاترہوکر خالص ملک وقوم کے مفادات کومدنظر رکھتے ہوئے کام کیاجائے۔

مزید : میٹروپولیٹن 4


loading...