ڈہر کی سول ہسپتال، پولیس، مظاہرین میں تصادم، پتھراؤ، گاڑیوں پر حملہ، حالات کشیدہ

  ڈہر کی سول ہسپتال، پولیس، مظاہرین میں تصادم، پتھراؤ، گاڑیوں پر حملہ، حالات ...

  

ڈہرکی (نامہ نگار)ڈہرکی پولیس کی طرف سے شر برادری کے نوجوان شبیر شر کو جعلی پولیس مقابلہ میں شدید زخمی کرڈالاپولیس کی سردار شہر یار خان شر سے بدتمیزی ہوائی (بقیہ نمبر39صفحہ6پر)

فائرنگ اور مظاہرین پرتشدد کرنے پر شر برادری کے مشتعل مظاہرین نے ڈہرکی سول ہسپتال پردھاوا بول کرپولیس پر پتھراؤ کردیااور ہسپتال کے کمروں میں توڑپھوڑکرکے وہاں کھڑی گاڑیوں کے شیشے بھی توڑ دیئے جس پر پولیس نے اور ہسپتال کیانچارج کی مدعیت میں 247 افراد کیخلاف دو الگ الگ مقدمات درج کر لئے ہیں مقدمات میں دہشت گردی ایکٹ کی دفعات بھی شامل ہیں مقدمہ میں ڈہرکی تھانہ کے یس ایچ اوسردار چانڈیو سے تلخ کلامی کرنے والے حاتن شراوراسکے بیٹوں کانام بھی درج ہے واضع رہے کہ گزشتہ رات دیر گئے ڈہرکی پولیس نے شر برادری کے نوجوان کوپولیس مقابلہ کے بعد زخمی حالت میں گرفتار کرنے کا دعویٰ کیا تھا جب کہ ورثاء کا کہنا تھا کہ ہمارے نوجوان شبیر شر کو گرفتار کرنے کے بعد ڈہرکی پولیس نے دونوں ٹانگوں میں گولیاں مار کرزخمی کیا ہے جس کے بعد ممبر سندھ اسمبلی اور شر برادری کے سردار میر شہر یار خان شر. حاتن شر اور دیگر نے زخمی ہونے والے شبیر شر سے ملکر تفصیل معلوم کرنے ڈہرکی سول ہسپتال پہنچے تووہاں پر موجود ڈہرکی تھانہ کے ایس ایچ او سردار چانڈیو نے ایم پی اے شہر یار خان شر اور دیگر کو ہسپتال میں داخل ہونے سے روک دیا اور بدتمیزی کی ہسپتال کامین گیٹ بند کرا دیا جس پرشر برادری کے لوگ مشتعل ہوگئے اور کہا کہ ایک تو ہمارے نوجوان کو بلاوجہ گولیاں مار کر معذور بنادیا ہے اور ہمارے سردار کو زخمی سے ملنے بھی نہیں دیا جارہا اور پولیس والے الٹا بدتمیزی بھی کررہی ہے اسکے بعد ہسپتال میدان جنگ بن گیا پولیس اور مظاہرین کے درمیان باربارجھڑپیں ہوتی رہی ایسے واقعے کی پولیس نے رات دیر گئے 247 افرادکے خلاف دو الگ الگ مقدمات درج کردیئے ہیں مقدمہ درج ہونے کے بعد شر برادری کے لوگ مذید اشتعال میں آگئے ہیں انہوں نے کہا کہ ہمارے خلاف سیاسی انتقامی کارروائیوں کا سلسلہ جاری کیا ہے اس سلسلے میں تحریک انصاف کے منتخب ممبر سندھ اسمبلی شہر یار خان شر. حاتن شر اوردیگر نے کہا ہے کہ ہم پولیس کیایسیاوچھے ہتھکنڈوں سے گھبرانے والے نہیں ہم اپنی برادری کے بندیپولیس کی دہشت گردی کی نظر نہیں ہونے دیں گے

مزید :

ملتان صفحہ آخر -