ای سی سی، یوٹیلیٹی سٹور ز کی 5اشیاء پر سبسڈی کی مدت میں  15دن کی توسیع کی منظوری

      ای سی سی، یوٹیلیٹی سٹور ز کی 5اشیاء پر سبسڈی کی مدت میں  15دن کی توسیع کی ...

  

 ٍ  اسلام آباد (سٹاف رپورٹر) اقتصادی رابطہ کمیٹی نے  یوٹیلیٹی اسٹورز کی 5 اشیاء پر سبسڈی کی مدت میں 15 دن کی توسیع کر دی۔شوکت ترین کی زیر صدارت کابینہ کی اقتصادی رابطہ کمیٹی کا اجلاس ہوا جس میں  یوٹیلیٹی اسٹورز کی 5 اشیاء پر سبسڈی کی مدت میں 15 دن کی توسیع کی گئی ذرائع کے مطابق پانچ بنیادی اشیائے خوردونوش میں چینی، آٹا، گھی، دالیں اور چاول شامل ہیں،وزارت صنعت و پیداوار نے سبسڈی میں اگلے چھ ماہ کی توسیع کا مطالبہ کیا تھا۔ذرائع  کے مطابق ای سی سی نے سبسڈی کے معاملے پر غور کیلئے کمیٹی قائم کر دی، کمیٹی صورت حال کا تجزیہ کرکے سفارشات پیش کرے گی،ای سی سی نے وزارت داخلہ سمیت مختلف محکموں کیلئے ضمنی گرانٹس کی منظوری دیدی۔کابینہ کی اقتصادی رابطہ کمیٹی کا اجلاس وفاقی وزیر خزانہ شوکت ترین کی زیر صدارت منعقد ہوا جس میں فیڈرل بورڈ آف ریونیو، اسٹیبلشمنٹ، ایوی ایشن، خزانہ، بین الصوبائی رابطہ اور وزارت داخلہ کے لیے 10 ضمنی گرانٹس کی سمریوں کی منظوری سمیت 14 نکاتی ایجنڈے پر غورکیا گیا۔وزارت خزانہ کی جانب سے جاری کردہ اعلامیہ میں بتایا گیا ہے کہ ای سی سی نے وزارت صنعت و پیداوار کو ایک لاکھ میٹرک ٹن چینی درآمد کرنے کے لیے 25 جون کو کھولے جانے والے ٹینڈر کی منظوری دیدی ہے، جب کہ کاٹن کی امدادی قیمت مقرر کرنے کے لیے ذیلی کمیٹی کا قیام عمل لایا گیا ہے، جو 15 دن میں رپورٹ دے گی۔ جب کہ پی این ایس سی کے واجبات کی ادائیگی کے لیے پٹرولیم ڈویڑن، فنانس ڈویڑن اور پی ایس او کو ٹائم فریم دینے کی ہدایت کردی ہے۔اجلاس میں نیٹ ہائیڈل پرافٹ کی مد میں واجبات کی ادائیگی کیلیے ای سی سی نے خزانہ ڈویڑن اور پاور ڈویڑن کو دو ہفتے کے اندر ممکنہ حل پر مبنی آپشنز اور تجاویز تیار کرکے پیش کرنے کی ہدایات جاری کردی ہیں۔ جب کہ وزارت نیشنل فوڈ سیکورٹی اینڈ ریسرچ کی جانب سے کاٹن کی 2021-22 کی فصل کیلیے امدادی قیمت مقرر کرنے کی سمری پر بھی تفصیلی غور کیا گیا۔اجلاس میں وزارت ایوی ایشن کو رواں مالی سال 2020-21 کے لیے تکنیکی ضمنی گرانٹ کے ذریعے ایک کروڑ روپے اضافی فنڈز، اسٹیبلشمنٹ ڈویڑن کو پاکستان اکیڈیمی فار دیہی ترقی پشاور کے لیے 2 کروڑ 7 لاکھ روپے کی تکنیکی ضمنی گرانٹ،خزانہ ڈویڑن کی جانب سے رواں مالی سال 2020-21 کے لیے سرکاری ملازمین کو تنخواہوں میں فرق کے الاؤنس کی ادائیگی کے لیے ایک ارب روپے کے فنڈز فراہم کرنے کی سمری،وزارت بین الصوبائی رابطہ کو رواں مالی سال کے لیے ایک کروڑ 67 لاکھ روپے، وزارت داخلہ کی جانب سے فرنٹیئر کور بلوچستان (ساؤتھ) کے لیے ایک ارب ایک کروڑ 21 لاکھ 76 ہزار روپے، امیگریشن اینڈ پاسپورٹ ڈیپارٹمنٹ کے لیے ایک ارب 60 کروڑ روپے کی تیکنیکی ضمنی گرانٹس کی منظوری دی گئی ہے۔ اسی طرح وزارت داخلہ کی جانب سے بھجوائی جانے والی تیسری سمری کے تحت ڈیپارٹمنٹ آف امیگریشن اینڈ پاسپورٹ کو ہی 7 کروڑ 38 لاکھ 70 ہزار روپے کی دوسری تیکنیکی ضمنی گرانٹس جاری کرنے کی بھی منظوری دے دی ہے۔ یہ گرانٹ رواں مالی سال کے لیے این ایس پی سی ادائیگیوں کے لییمانگی گئی تھی۔اجلاس میں وزارت منصوبہ بندی کے رواں مالی سال 2020-21 کے لیے این ڈی آر ایم ایف پراجیکٹس کے لیے غیر ملکی امداد کے استعمال کے حوالے سے بھی 5 ارب 80 کروڑ روپے، امور خارجہ ڈویڑن کے لیے 2 ارب روپے، وزارت تجارت کے ٹیکسٹائل ونگ کے لیے 8 ارب روپے اور فیڈرل بورڈ آف ریونیو کے لیے 45 کروڑ 64لاکھ 10 ہزار روپے کی تیکنیکی ضمنی گرانٹس  منظور کی گئی ہیں۔

 ای سی سی 

مزید :

صفحہ اول -