چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ کا ایس پی صدر کے خلاف عدالت میں غلط بیانی کرنے پر کارروائی کا عندیہ 

چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ کا ایس پی صدر کے خلاف عدالت میں غلط بیانی کرنے پر ...
چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ کا ایس پی صدر کے خلاف عدالت میں غلط بیانی کرنے پر کارروائی کا عندیہ 

  

لاہور ( ڈیلی پاکستان آن لائن ) چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ جسٹس قاسم خان نے پولیس کی جانب سے شہری کی اراضی پر مبینہ قبضے کے کیس میں عدالت سے غلط بیانی کرنے پر ایس پی صدر کے خلاف کارروائی کا عندیہ دے دیا۔

آج دوران سماعت ایس پی صدر نے عدالت میں پیش ہو کر معافی نامہ پیش کیا جس میں کہا گیا کہ عدالت سے غیر مشروط معافی مانگتا ہوں ، خود کو عدالت کے رحم و کرم پر چھوڑتا ہوں، چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ میں نے کہا تھا غلطی تسلیم کریں ، معافی نامے میں غلطی نہیں تسلیم کی گئی ۔ ایس پی صدر حفیظ الرحمان بگٹی کے وکیل نے عدالت سے کہا کہ اگر غلطی تسلیم کا لکھا تو آفیسر کا کیئریر داو¿ پر لگ جائے گا۔

عدالت نے کہا کہ ڈپٹی پراسیکیوٹر جنرل بتائیں اس کیس میں سزا کا طریقہ کار کیا ہے ۔ ڈپٹی پراسیکیوٹر جنرل نے عدالت کو بتایا کہ عدالت میں غلط بیانی پر چھ ماہ قید کی سزا ہو سکتی ہے ، سمری ٹرائل میں فرد جرم عائد کئے بغیر بھی سزا ہو سکتی ہے ۔

چیف جسٹس قاسم خان نے ریمارکس دیے کہ توہین عدالت پر نہ کارروائی کی جا رہی ہے نہ توہین عدالت کے نوٹس جاری کئے ، عدالت میں غلط بیانی کرنے پر کارروائی کی جا رہی ہے ۔

ایس پی حفیظ الرحمان بگٹی کے وکیل عابد ساقی نے عدالت سے استدعا کی کہ ہمیں تیاری کیلئے وقت دیا جائے ۔

مزید :

قومی -