خود کش حملہ آور کا خاکہ تیار، عمر بیس سے پچیس سال کے درمیان تھی

خود کش حملہ آور کا خاکہ تیار، عمر بیس سے پچیس سال کے درمیان تھی
 خود کش حملہ آور کا خاکہ تیار، عمر بیس سے پچیس سال کے درمیان تھی

  

لا ہور (اپنے کرا ئم ر پو رٹر سے ) سانحہ لاہور کے خود کش حملہ آور سے متعلق ابتدائی معلومات غلط نکلیں، جس کا شناختی کارڈ ملا وہ حملے میں ملوث نہیں تھا۔ وزیراعظم کو بریفنگ میں پولیس افسروں کا اعتراف، مبینہ خود کش حملہ آور کا خاکہ تیار، عمر بیس سے پچیس سال کے درمیان تھی۔ تفصیلا ت کے مطا بق اتوار کی شام دھماکے میں جان کی بازی ہارنے والا مظفر گڑھ کا محمد یوسف کچھ دیر میں ہی دہشت گرد قرار پایا اور شناختی کارڈ اس کی جیب میں تھا۔ عوامی حلقے حیران تھے کہ خود کش بمبار کی جیب میں شناختی کاڑد آخر کیوں تھا؟۔ ذرائع کے مطابق پیر کی صبح وزیراعظم محمد نواز شریف کو بریفنگ دی تو پولیس حکام نے بھی اپنی غلطی مانی۔ پھر محمد یوسف دہشت گرد سے معصوم بن گیا جس کے بعد ایک اور دہشت گرد کا خاکہ جاری کر دیا گیا۔ دوسری جانب واقعے کی ایف آئی آر بھی درج ہو گئی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ چار دہشت گردوں نے پارک میں داخل ہونے کی کوشش کی۔ سکیورٹی گارڈز کی مزاحمت سے تین دہشتگرد فرار ہو گئے جبکہ ایک دہشت گرد پارک میں داخل ہوا اور خود کو دھماکے سے اڑا لیا۔ ایف آئی آر کے اندراج کے بعد متعلقہ ایس پی اقبال ٹاؤن جائے وقوعہ پر پہنچے اور بتایا کہ ابھی یہ واضح نہیں کہ دہشت گرد پارک میں کیسے پہنچا۔

مزید :

صفحہ اول -