کیا شہبازشریف اب خون دے سکتے ہیں، حقیقت سامنے آگئی

کیا شہبازشریف اب خون دے سکتے ہیں، حقیقت سامنے آگئی
کیا شہبازشریف اب خون دے سکتے ہیں، حقیقت سامنے آگئی

  


لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک) لاہور کے گلشن اقبال پارک میں خود کش حملے کے بعد وزیراعلیٰ پنجاب شہبازشریف نے ہسپتال میں مریضوں کیلئے خون کا عطیہ دیا اورماضی میں ان کو کینسر جیسا مرض لاحق رہنے کی وجہ سے ناقدین نے سوشل میڈیا پر طرح طرح کے سوالات اٹھاناشروع کردیئے تھے لیکن حقیقت یہ ہے کہ شہبازشریف تندرست ہیں اور خون دے سکتے ہیں ۔

یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ وزیراعلیٰ پنجاب نے جولائی 2015ء میں سوشل میڈیا سٹیٹس شیئرکیاجس میں میاں شہبازشریف کاکہناتھاکہ ’کچھ لوگوں نے مناسب سوال پوچھاکہ میں اپنے میڈیکل چیک اپ کیلئے لندن کیوں جاتاہوں؟ پیارے دوستو! میں اپنی کہانی کسی کو نہیں بتاناچاہتالیکن سوچتا ہوں کہ آپ کو حقیقت جاننے کاحق ہے، مشرف کے دورمیں جلاوطنی کے دوران 'بیک بون کینسر' کی تشخیص ہوئی تھی اور اس وقت لندن میں تھاتو وہیں علاج شروع ہوگیاتواسی وجہ سے لندن میں ہی چیک اپ ہوتاہے کیونکہ مجھے ڈاکٹر تبدیل نہ کرنے کا مشورہ دیا گیا ، میں یہ یقین دہانی کراتاہوں کہ اس ضمن میں تمام اخراجات جیب سے اداکرتاہوں اور اس مقصد کیلئے حکومت پنجاب کا ایک پیسہ ہی استعمال نہیں ہوا‘۔

وزیراعلیٰ نے خود اپنی بیماری کی تصدیق بھی کی تھی اور ساتھ ہی اپنی صحتیابی کی خبر بھی، علاج مکمل ہونے کے بعد اب وہ مکمل طورپر صحت مند

ہیں اور خون دے سکتے ہیں ۔

اس ضمن میں ماہرین صحت کا کہنا ہے کہ 'بیک بون کینسر' جسے مرض میں مبتلا آدمی صحتمند ہو جائے تو مخصوص وقت گزرنے کے بعد خون دے سکتا ہے، ہسپتال انتظامیہ سے رابطہ کیا گیا تو ان کا کہنا تھا کہ وزیر اعلی نے واقعی خون کا عطیہ دیا ، اور وہ کبھی بلڈ کینسر جیسے مرض میں مبتلا نہیں رہے. اس حوالے سے سوشل میڈیا پر چند حلقو ں کی جانب سے چلائی جانے والی مہم انتہائی افسوسناک اور اخلاقیات سے گری ہوئی حرکت ہے . بہت سے سوشل میڈیا صارفین نے بھی وزیراعلیٰ پنجاب کی طرف سے خون کا عطیہ دینے کے اقدام کو سراہتے ہوئے ان کی تائید کی ۔

مزید : لاہور