چونگی امر سدھو،سسر کے ہاتھوں جاں بحق دلہن سپرد خاک

چونگی امر سدھو،سسر کے ہاتھوں جاں بحق دلہن سپرد خاک

  

لاہور (خبر نگار) چونگی امر سدھو مین بازار میں شقی القلب سسر اور دیور کے ہاتھوں قتل ہونے والی تین ماہ کی دلہن فرزانہ کی نعش پولیس نے گزشتہ روز پوسٹ مارٹم کے بعد ورثا کے حوالے کر دی ہے۔پولیس نے مقتولہ فرزانہ کی نعش ورثاء کے حوالے کی تو اُس کی والدہ اور بہن پر غشی کے دورے پڑتے رہے۔ اس موقع پر مقتولہ کی والدہ اور والد مختار احمد نے ’’پاکستان‘‘ سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ اُن کی بیٹی پر بلاوجہ بدچلنی کا الزام لگایا گیا ہے مقتولہ کے سسر میاں خاں اور خاوند وقاص نے وقوعہ سے چار روز قبل بھی تشدد کیا اور تشدد کر کے رقم کی ڈیمانڈ کرتے رہے۔ دوسری جانب تفتیشی افسر نے عینی شاہدین میں شامل دو خواتین گاہکوں سمیت مارکیٹ میں تعینات سیکیورٹی گارڈ یعقوب کا بیان ریکارڈ کرلیا جس میں فرزانہ کی موت کو بدچلنی نہیں بلکہ خاندانی رنجش کا شاخسانہ قرار دیا گیا ہے۔ خواتین گواہان نے پولیس کو اپنے الگ الگ بیان میں بتایا کہ مقتولہ اپنی زندگی کی بھیک مانگتی رہی اور بے گناہی کی صفائی دیتی رہی،لیکن ملزمان کو ذرا بھر ترس نہ آیا،جبکہ سیکیورٹی گارڈ یعقوب نے اپنا بیان ریکارڈ کراتے بتایا کہ قتل سے پہلے ملزمان نے تشدد کیا اور گلہ دبا نا چاہاشور پر چھریوں کے پے در پے وار کر کے فرزانہ کو موت کے گھاٹ اتار دیا۔تفتیشی افسر عارف جٹ نے ’’پاکستان‘‘ کو بتایا کہ اب تک کی تفتیش کے دوران بدچلنی کا الزام سامنے نہیں آیا، بلکہ سسر اور بہو کے درمیان شادی کے بعد سے چلنے والی رنجش زیادہ پائی گئی ہے، تفتیشی افسر کے مطابق ملزمان میاں خاں اور جبران کا عدالت سے چار چار روز کا جسمانی ریمانڈ حاصل کر کے مقتولہ کے خاوند وقاص کی گرفتاری کے لئے چھاپے مارے جا رہے ہیں۔

مزید :

علاقائی -