پولیس اہلکار کی لحد کو بند کرکے مٹی ڈالنے لگے تو دوسانپ نکل آئے ، گورکن کا ایساانکشاف کہ ہرکوئی توبہ پر مجبورہوگیا

پولیس اہلکار کی لحد کو بند کرکے مٹی ڈالنے لگے تو دوسانپ نکل آئے ، گورکن کا ...
پولیس اہلکار کی لحد کو بند کرکے مٹی ڈالنے لگے تو دوسانپ نکل آئے ، گورکن کا ایساانکشاف کہ ہرکوئی توبہ پر مجبورہوگیا

  

کراچی(ڈیلی پاکستان آن لائن) دنیا کی مصروفیات میں انسان آخرت کو بھول جاتاہے ، ہر طرف لوٹ کھسوٹ، نفسانفسی کا عالم ہے لیکن بعض اوقات ایسے واقعات بھی ہوتے ہیں جو آپ کی زندگی بدل دینے کے لیے کافی ہوتے ہیں اور ایسا ہی ایک واقعہ محکمہ پولیس کے ایک اہلکار کے جنازے کے موقع پر پیش آیا۔

65سالہ بزرگ گورکن باباعبداللہ نے بتایاکہ ’ سب نے یہیں آنا ہے،موت برحق ہے لیکن انسان نہیں سمجھتا۔تقریباً 14 سال پہلے کی بات ہے، ایک بہت بڑا پولیس افسر تھا، جسے دفن کرنے کے لئے شاہ فیصل کالونی قبرستان لایا گیا۔ بڑی بڑی گاڑیوں میں لوگ آئے ہوئے تھے۔ میں نے خود قبر تیار کرکے اینٹیں لگائیں اور مٹی نکال کر باہر رکھی۔ اپنے ہاتھوں سے میت کو قبر میں اتارا، لحد بند کرکے جیسے ہی ہم اوپر مٹی ڈالنے لگے تو اچانک قبر کے اندر سے دو سانپ، جن کی لمبائی ایک، ڈیڑھ فٹ ہوگی، نظر آئے ۔´ سب لوگ خوفزدہ ہوکر پیچھے ہوگئے، ہم نے انہیں مارنے کی کوشش کی لیکن وہ پھر قبر میں غائب ہوگئے۔ وہاں موجود لوگوں کے چہروں کے رنگ اُڑگئے۔ حیران و پریشان سب استغفار پڑھ رہے تھے۔“

بابا عبداللہ نے بتایا کہ ”لوگ ایسی چیزیں اور واقعات دیکھ کر وقتی طور پر خوفزدہ تو ہوجاتے ہیں اور اللہ کا ذکر کرتے ہیں، اس سے معافی مانگتے ہیں لیکن یہاں سے جانے کے بعد سب بھول جاتے ہیں۔ یہ دنیا جگہ ہی ایسی ہے، بڑے بڑے پارسائی کا دعویٰ کرنے والے بہک جاتے ہیں، لیکن موت ایک دن سب کو آنی ہے، اس سے کوئی بھاگ نہیں سکتا۔“

مزید :

قومی -